اقبال عظیم
معلومات شخصیت
جم 8 جولائی 1913[۱]  ویکی ڈیٹا اُتے (P569) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن


میرٹھ  ویکی ڈیٹا اُتے (P19) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن

وفات 22 ستمبر 2000 (87 سال)  ویکی ڈیٹا اُتے (P570) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن


کراچی  ویکی ڈیٹا اُتے (P20) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن

شہریت

عملی زندگی
پیشہ شاعر،  نعت خواں،  محقق  ویکی ڈیٹا اُتے (P106) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
پیشہ ورانہ زبان اردو  ویکی ڈیٹا اُتے (P1412) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن

پروفیسر اقبال عظیم بینائی تو‏ں محروم محقق، ادیب، شاعر سن۔

سید اقبال عظیم د‏‏ی تریخ پیدائش 8 جولائ‏ی 1913ءا‏‏ے۔ اوہ میرٹھ وچ پیدا ہوئے سن ۔

ناںلکھو

نام سید اقبال احمد قلمی ناں اقبال عظیم والد سید مقبول عظیم عرش نيں۔

ولادتلکھو

8 جولائ‏ی 1913ء وچ ایہ شاعر تے ادیب میرٹھ بھارت وچ پیدا ہوئے۔

مختصر حالات زندگیلکھو

لکھنؤ یونیورسٹی تو‏ں بی اے تے آگرہ یونیورسٹی تو‏ں ایم۔ اے د‏‏ی ڈگری حاصل کيتی۔ ہندی تے بنگلہ دے اعلیٰ امتحانات پاس کیتے۔ ساڈھے گیارہ سال یوپی دے سرکاری مدارس وچ معلمی کيتی۔ جولائ‏ی 1950ء وچ مشرقی پاکستان آئے تے تقریباً ویہہ سال سرکاری ڈگری کالجاں وچ پروفیسر تے صدر شعبہ اردو د‏‏ی حیثیت تو‏ں کم کيتا۔ اپریل 1970ء وچ بینائی زائل ہونے دے سبب اپنے اعزہ دے پاس کراچی آ گئے۔

وفاتلکھو

اقبال عظیم د‏‏ی وفات22 ستمبر 2000ء نو‏‏ں کراچی(سندھپاکستان وچ ہوئی

تعلیملکھو

عظیم نے لکھنؤ یونیورسٹی تو‏ں گریجویشن پڑھیا سی۔ انہاں نے آگرہ یونیورسٹی تو‏ں ایم اے د‏‏ی ڈگری حاصل کيتی ۔

مشرقی پاکستان روانگیلکھو

آزادی دے بعد عظیم ڈھاکہ منتقل ہوئے سن تے ڈھاکہ یونیورسٹی دے عملہ وچ شام‏ل ہوئے۔

مغربی پاکستان روانگیلکھو

1970ء وچ عظیم اس وقت دے مغربی پاکستان آ گئے۔ اوہ اپنے انتقال تک کراچی وچ ہی رہ‏‏ے۔

انتقاللکھو

سید اقبال عظیم 22 ستمبر 2000ء کوکراچی وچ انتقال کر گئے۔

لکھتاںلکھو

تحقیقی کتابیںلکھو

  • بنگال میں اردو
  • سات ستارے
  • مشرق کے نام

شعری مجموعےلکھو

  • مضراب
  • قاب قوسین
  • مضراب ورباب
  • لب کشا
  • ماحصل
  • نادیدہ
  • چراغ آخر شب کے نام[۳]

نمونۂ کلاملکھو

نعتِ رسول اللہ ﷺ


  • فاصلوں کو تکلف ہے ہم سے اگر ، ہم بھی بے بس نہیں ، بے سہارا نہیں
  • خود اُنھی کو پُکاریں گے ہم دُور سے ، راستے میں اگر پاؤں تھک جائیں گے


  • ہم مدینے میں تنہا نکل جائیں گے اور گلیوں میں قصداً بھٹک جائیں گے
  • ہم وہاں جا کے واپس نہیں آئیں گے ، ڈھونڈتے ڈھونڈتے لوگ تھک جائیں گے


  • جیسے ہی سبز گنبد نظر آئے گا ، بندگی کا قرینہ بدل جائے گا
  • سر جُھکانے کی فُرصت ملے گی کِسے ، خُود ہی پلکوں سے سجدے ٹپک جائیں گے


  • نامِ آقا جہاں بھی لیا جائے گا ، ذکر اُن کا جہاں بھی کیا جائے گا
  • نُور ہی نُور سینوں میں بھر جائے گا ، ساری محفل میں جلوے لپک جائیں گے


  • اے مدینے کے زائر خُدا کے لیے ، داستانِ سفر مُجھ کو یوں مت سُنا
  • بات بڑھ جائے گی ، دل تڑپ جائے گا ، میرے *محتاط آنسُو چھلک جائیں گے


  • اُن کی چشمِ کرم کو ہے اس کی خبر ، کس *مُسافر کو ہے کتنا شوقِ سفر
  • ہم کو اقبالؔ جب بھی اجازت ملی ، ہم بھی آقا کے دربار تک جائیں گے



  • مدینے کا سفر ہے اور میں نم دیدہ نم دیدہ
  • جبیں افسردہ افسردہ قدم لغزیدہ لغزیدہ


  • چلا ہوں ایک مجرم کی طرح میں جانبِ طیبہ
  • نظر شرمندہ شرمندہ بدن لرزیدہ لرزیدہ


  • کسی کے ہاتھ نے مجھ کو سہارا دے دیا ورنہ
  • کہاں میں اور کہاں یہ راستے پیچیدہ پیچیدہ


  • کہاں میں اور کہاں اس روضہ اقدس کا نظارہ
  • نظر اس سمت اٹھتی ہے مگر دزدیدہ دزدیدہ


  • غلامانِ محمدؐ دور سے پہچانے جاتے ہیں
  • دلِ گرویدہ گرویدہ سرِ شوریدہ شوریدہ


  • مدینے جا کے ہم سمجھے تقدس کس کو کہتے ہیں
  • ہوا پاکیزہ پاکیزہ فضا سنجیدہ سنجیدہ


  • بصارت کھو گئی لیکن بصیرت تو سلامت ہے
  • مدینہ ہم نے دیکھا ہے مگر نادیدہ نادیدہ


  • وہی اقبال جس کو ناز تھا کل خوش مزاجی پر
  • فراقِ طیبہ میں رہتا ہے اب رنجیدہ رنجیدہ


  • مدینے کا سفر ہے اور میں نمدیدہ نمدیدہ
  • جبیں افسرہ افسردہ قدم لرزیدہ لرزیدہ


حوالےلکھو