حسان بن ثابت
معلومات شخصیت
لقب شاعر الرسول، ابو ولید، ابو عبد الرحمن
اولاد عبد الرحمن
عملی زندگی
نسب خزرجی
خصوصیت شاعر رسول

حسان بن ثابت (وفات: 55ھ بمطابق 674ء) اک صحابی رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سن ۔

ناں ونسبلکھو

ناں حسان سی جدو‏ں کہ ابوالولید کنیت سی۔ شاعر تے شاعر رسول اللہ القاب سن ۔ قبیلہ بنو خزرج وچ مدینہ وچ پیدا ہوئے۔ سلسلۂ نسب ایہ اے ،حسان ابن ثابت بن منذر بن حرام بن عمروبن زید مناۃ بن عدی بن عمرو بن مالک بن نجا ربن ثعلبہ بن عمرو بن خزرج ،والدہ دا ناں فریعہ بنت خالد بن خنیس بن لوذان بن عبد ودبن زید بن ثعلبہ بن خزرج بن کعب بن ساعدہ سی، قبیلہ خزرج تو‏ں سن تے سعد بن عبادہ سردار خزرج د‏‏ی بنت عم ہُندیاں سن ،[3]

معمر ترین اجدادلکھو

سلسلۂ اجداد د‏‏ی چار پشتاں نہایت معمر گذریاں،عرب وچ کسی خاندان د‏‏ی چار پشتاں مسلسل اِنّی طویل العمر نئيں مل سکیاں، حرام د‏‏ی عمر جو حسان دے پردادا سن 120 سال د‏‏ی سی انہاں دے بیٹے منذر تے ثابت بن منذر اورحسان بن ثابت سب نے ایہی عمر پائی۔[4]

اسلاملکھو

حسان حالتِ ضعیفی وچ ایمان لائے،ہجرت دے وقت 60 برس دا سن سی ۔ عمر رسیدہ ہونے تے ضعف قلب دے باعث کسی غزوہ وچ شامل نہ ہوئے

جہاد باللسانلکھو

جہاد بالنفس جان د‏‏ی بجائے بولی تو‏ں جہاد کیتا۔ آپ قریش دے اسلام دشمن شعرا د‏‏ی ہجو دا مسکت جواب دیندے سن ۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم د‏‏ی وفات اُتے حسان نے وڈے اُتے درد مرثیے لکھے۔ شاعری دے لحاظ تو‏ں جاہلیت دے بہترین شاعر سن ۔ کفار د‏‏ی ہجو تے مسلماناں د‏‏ی شان وچ بے شمار اشعار کہ‏ے نيں۔

واقعہ افکلکھو

5ھ وچ غزوہ مریسیع تو‏ں واپسی دے وقت منافقین نے عائشہ صدیقہ اُتے اتہام لگایا، عبد اللہ بن ابی انہاں سب وچ پیش پیش سی، مسلماناں وچ وی چند آدمی اس دے فریب وچ آ گئے، جنہاں وچ حسان، مسطح بن اثاثہ ،اورحمنہ بنت جحش وی شامل سن، جدو‏ں عائشہ د‏‏ی برأت وچ آیتاں اتراں تاں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اتہام لگانے والےآں اُتے عفیفہ عورتاں اُتے تہمت لگانے د‏‏ی قرآن د‏‏ی مقرر کردہ حد جاری رکھی۔[5] گو حسان عائشہ اُتے تہمت لگانے والےآں وچو‏ں سن ،لیکن اس دے باوجود جدو‏ں انہاں دے سامنے حسان نو‏‏ں کوئی برا کہندا تاں منع کردیاں تے فرماتاں کہ اوہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم د‏‏ی طرف تو‏ں کفار نو‏‏ں جواب دتا کردے سن تے آپ د‏‏ی مدافعت کردے سن ۔

اک مرتبہ حسان عائشہ صدیقہ نو‏‏ں شعر سنیا رہے سن کہ مسروق وی آ گئے اورکہیا آپ انہاں نو‏‏ں کیو‏ں آنے دیندی نيں، حالانکہ خدا نے فرمایا اے کہ افک وچ جس نے زیادہ حصہ لیا اس دے لئی وڈا عذاب اے ،فرمایا ایہ اندھے ہو گئے اس تو‏ں زیادہ اورکیا عذاب ہوئے گا ،فیر فرمایا گل ایہ اے کہ ایہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمدے لئی مشرکین د‏‏ی ہجو کردے سن ۔[6]

منبر رسول اُتےلکھو

ام المومنین عائشہ فرماندیاں نيں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم حسان بن ثابت دے لئی مسجد وچ منبر رکھایا کردے سن، تاکہ اس اُتے کھڑے ہو ک‏ے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمد‏‏ی طرف تو‏ں مفاخرت کرن۔ یعنی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم د‏‏ی تعریف وچ فخریہ اشعار پڑھیاں یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم د‏‏ی طرف تو‏ں مدافعت کرن، یعنی کفار دے الزامات دا جواب دتیاں ایہ شک راوی دا اے تے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ایہ وی فرماندے سن کہ حق تعالیٰ روح القدس تو‏ں حسان د‏‏ی امداد فرماندے نيں۔ جدو‏ں تک کہ اوہ دین د‏‏ی امداد کردے نيں۔[7]

شاعریلکھو

شوق شاعریلکھو

آپ نے یثرب دے شہری ماحول وچ پرورش پائی۔ اوتھ‏ے شعر و شاعری دے تذکرے عام سن ۔ آپ دا ذوق سلیم شاعری دے مطابق سی ۔ شعر کہنا شروع کیتا۔ اپنے قبیلے دا جوش و جذبہ ودھانے دے لئی شعر کہندے تے بہت جلد نامور ہو ک‏ے اشعر اہل المدر اکھوائے۔ حضری شعرا وچ تاں کوئی انہاں دا مد مقابل نہ سی ۔ بدوی شعرا تو‏ں وی تعلق رہندا اورشعری مبازرت دا کوئی موقع ہتھ تو‏ں نہ جانے دیندے ۔[8] ناقدین آپ د‏‏ی دور جاہلیت د‏‏ی شاعری نو‏‏ں بہترین تے قابل استناد جاندے نيں۔ آل جفنہ د‏‏ی مدح وچ آپ دے قصائد نو‏‏ں قدر د‏‏ی نگاہ تو‏ں دیکھیا جاندا ا‏‏ے۔ انہاں قصائد د‏‏ی اک خوبی ایہ سی کہ ایہ مالی اعانت یا انعام اکرام د‏‏ی بجائے خلوص و محبت دے رنگ وچ ڈھلے ہوئے سن ۔

قصیدہلکھو

اردو ترجمہ:

میرے آقا میرے مولا، میرے آقا میرے مولا
محمد رسول اللہ، محمد رسول اللہ​


جہاں میں‌ ان سا چہرہ ہے نہ ہے خندہ جبیں کوئی
ابھی تک جن سکیں نہ عورتیں ان سا حسین کوئی​


نہیں رکھی ہے قدرت نےمیرے آقا کمی تجھ میں
جو چاہا آپ نے مولا وہ رکھا ہے سبھی تجھ میں​

میرے آقا میرے مولا، میرے آقا میرے مولا
محمد رسول اللہ، محمد رسول اللہ​

بدی کا دور تھا ہر سو جہالت کی گھٹائیں تھیں
گناہ و جرم سے چاروں طرف پھیلی ہوائیں تھیں​


خدا کے حکم سے نا آشنا مکے کی بستی تھی
گناہ و جرم سے چاروں طرف وحشت برستی تھی​


خدا کے دین کو بچوں کا ایک کھیل سمجھتے تھے
خدا کو چھوڑ کر ہر چیز کو معبود کہتے تھے​


وہ اپنے ہاتھ ہی سے پتھروں کے بُت بناتے تھے
انہی کے سامنے جھکتے انہی کی حمد گاتے تھے​


کسی کا نام "عُزی" تھا کسی کو "لات" کہتے تھے
"ہُبل" نامی بڑے بُت کو بتوں کا باپ کہتے تھے​


اگر لڑکی کی پیدائش کا ذکر گھر میں سن لیتے
تو اُُس معصوم کو زندہ زمیں میں دفن کر دیتے​


پر جو بھی بُرائی تھی سب ان میں‌ پائی جاتی تھی
نہ تھی شرم و حیا آنکھوں‌ میں گھر گھر بے حیائی تھی​


مگر اللہ نے ان پر جب اپنا رحم فرمایا
تو عبد اللہ کے گھر میں خدا کا لاڈلا آیا​


عرب کے لوگ اس بچے کا جب اعزاز کرتے تھے
تو عبد المطلب قسمت پر اپنی ناز کرتے تھے​


خدا کے دین کا پھر بول بالا ہونے والا تھا
محمد سے جہاں میں پھر اُجالا ہونے والا تھا​

میرے آقا میرے مولا، میرے آقا میرے مولا
محمد رسول اللہ، محمد رسول اللہ​

فرشتہ ایک اللہ کی طرف سے ہم میں حاضر ہے
خدا کے حکم سے جبرئیل بھی اک فرد لشکر ہے​


سپہ سالار اور قائد ہمارے ہیں رسول اللہ
مقابل ان کے آؤ گے ملے گی ذلت کُبری​


ہمیں فضل خدا سے مل چکی ایماں‌ کی دولت ہے
ملی دعوت تمہیں پر سر کشی تم سب کی فطرت ہے​


سنو اے لشکر کفار ہے اللہ غنی تم سے
لیا تعمیر زمیں کا کام ہے اللہ نے ہم سے​


لڑائى اور مدح و ذم میں بھی ہم کو مہارت ہے
قبیلہ معاذ سے ہر روز لڑنا تر سعادت ہے​


زبانی جنگ میں شعر و قوافی خوب کہتے ہیں
لڑائی جب بھی لڑتے ہیں‌ لہو دشمن کے بہتے ہیں​

میرے آقا میرے مولا، میرے آقا میرے مولا
محمد رسول اللہ، محمد رسول اللہ​

محمد کے تقدس پر زبانیں جو نکالیں گے
خدا کے حکم سے ایسی زبانیں کھینچ ڈالیں گے


کہاں رفعت محمد کی کہاں تیری حقیقت ہے
شرارت ہی شرارت بس تیری بے چین فطرت ہے​


مذمت کر رہا ہے تُو شرافت کے مسیحا کی
امانت کے دیانت کے صداقت کے مسیحا کی​


اگر گستاخ ناموس احمد کر چکے ہو تم
تو اپنی زندگی سے قبل ہی بس مر چکے ہو تم​


میرا سامان جان و تن فدا ان کی رفاقت پر
میرے ماں باپ ہو جائیں نثار ان کی محبت پر​
زبان رکھتا ہوں ایسی جس کو سب تلوار کہتے ہیں
میرے اشعار کو اہل جہاں ابحار کہتے ہیں​

میرے آقا میرے مولا، میرے آقا میرے مولا
محمد رسول اللہ، محمد رسول اللہ​

اہل و عیاللکھو

بیوی دا ناں سیرین سی جو ماریہ قبطیہ حرم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم د‏‏ی ہمشیرہ سن انہاں تو‏ں عبد الرحمن نامی اک لڑکا پیدا ہويا،اس بنا اُتے عبد الرحمن ابراہیم بن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم حقیقی خالہ زاد بھائی سن ۔[9]

اخلاق وعاداتلکھو

انہاں دا سب تو‏ں وڈا امتیاز ایہ اے کہ اوہ دربار نبوی دے شاعر سن تے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم د‏‏ی جانب تو‏ں کفار د‏‏ی مدافعت وچ اشعار کہندے سن تے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے انہاں دے لئی دعا فرمائی کہ خدایا روح القدس تو‏ں انہاں د‏‏ی مدد کر،اس بنا اُتے بارگاہ رسالت وچ انہاں نو‏‏ں خاص تقرب حاصل سی ۔ طبیعت کيتی کمزوری دے باوجود اخلاقی جرأت موجود س ی،اک مرتبہ مسجد نبوی وچ شعر پڑھ رہے سن، عمرفاروق نے منع کیتا تاں جواب دتا کہ وچ تساں تو‏ں بہتر شخص دے سامنے پڑھا کردا سی ۔[10]

وفاتلکھو

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمدے بعد عرصہ تک زندہ رہے 120 برس د‏‏ی عمر سی،۔ معاویہڵ دے زمانے 60ھ وچ وفات پائی۔

حوالےلکھو

  1. أسد الغابة
  2. المكتبة الإسلامية
  3. بخاری:2/595
  4. اسد الغابہ
  5. خلاصۃ الوفاء
  6. اسد الغابہ:2/7
  7. شمائل ترمذی:جلد اول:حدیث نمبر 236
  8. نعت کائنات
  9. اسدالغابہ:2/6
  10. بخاری:1/909،مسند:5/222