ورتنوالا:عباس دھوتھڑ

(ورتنوالا:Abbas dhothar توں مڑجوڑ)

زیادہ تر@بوہت‏ے چرواہا@آجڑی ریوڑ@اِجّڑ رسم الخط@لپی حرف@اکھر ضرورت@لوڑ ضرورت سے زیادہ@لوڑ توں ودھ زیادہ اچھا@بوہت‏ا چنگا تجویز کی گئیں@تجویز کیتیاں گئیاں کیا خریدا@کیہ خریدیا کروائیں@کروائیاں فارمولوں@فارمولےآں ضرورت مند@لوڑ وَند جب تک@جدوں تک ہوتی تھیں@ہُندیاں سن ہوتی تھیں۔@ہُندیاں سن۔ ہوتی تھیں@ہُندیاں سن دیش دھروہ@غداری شرینی:@گٹھ: کی بھارتی اداکارائیں@د‏‏یاں بھارتی اداکاراواں کی خواتین@د‏‏یاں سوانیاں تحفوں@تحفےآں جنگ کی تیاری@لڑائی د‏‏ی تیاری ہوں گی@ہون گیاں کی علامات کبری@دیاں وڈیاں علامیتاں جامعہ سندھ@سندھ یونیورسٹی شائع کی@شائع کیتی موتی@مو‏تی جامعہ پیرس@پیرس یونیورسٹی کھانوں@کھانےآں کی گلوکارائیں@د‏‏یاں گلوکاراواں جامعہ کابل@کابل یونیورسٹی کیا ہوگا@کیہ ہوئے گا بعدازاں@بعد وچ لیں گی@لین گیاں جامعہ اوکسفرڈ@آکسفورڈ یونیورسٹی جامعہ کولمبیا@کولمبیا یونیورسٹی جامعہ مانچسٹر@مانچسٹر یونیورسٹی بچّوں@بچےآں جامعہ ڈھاکہ@ڈھاکہ یونیورسٹی جب کہ@جدوں کہ کی مساجد@دیاں مسیتاں تاریخ منگولیا@منگولیا دی تریخ گاوں@پنڈ اسلوبیاتی@اسلوبیات‏‏ی جامعہ لندن@لندن یونیورسٹی پھیپھڑوں@پھیپھڑےآں جامعہ الٰہ آباد@الٰہ آباد یونیورسٹی جامعہ علی گڑھ@علی گڑھ یونیورسٹی حکومت کی تشکیل@حکومت دی تشکیل کندھوں@موڈھیاں دعا کی شرخ@دعا دی شرخ تصنیف کیں@تصنیف کیتیاں کی خبریں@دیاں خبراں سلاسل@سلسلے ذیل میں@تھلے درج ذیل@تھلے لکھے مندرجہ ذیل@تھلے لکھے ملکیتی@ملکیتی بھاگنا@بھجنا صدائیں@صداواں کیا گیا@کیتا گیا تھی@سی تاریخ قازقستان@قازقستان دی تریخ تاریخ کریمیا@کریمیا دی تریخ تاریخ تاتارستان@تاتارستان دی تریخ تاریخ بشقورتوستان@بشقورتوستان دی تریخ تاریخ باشکیرستان @باشکیرستان دی تریخ تاریخ سائبیریا@سائبیریا دی تریخ تاریخ کرغیزستان@کرغیزستان دی تریخ لیتی تھیں@لیندیاں سن لڑکیوں@کُڑیاں لڑکیو‏ں@کُڑیاں والی سیاسی جماعتیں@والیاں سیاسی جماعتاں کی سیاسی جماعتیں@دیاں سیاسی جماعتاں عدالتی@عدالت‏ی دائر کی@دائر کیتی تاآنکہ@ایتھے تک کہ معاہدوں@معاہدےآں شرکتیں@شرکتاں چیتا@چیتا چیتے@چیتے والی شخصیات@والیاں شخصیتاں کی پاکستانی شخصیات@دیاں پاکستانی شخصیتاں کی ایرانی شخصیات@دیاں ایرانی شخصیتاں کی بھارتی شخصیات@د‏‏یاں بھارتی شخصیتاں کی جھیلیں@د‏‏یاں جھیلاں کی سرگرمیاں@د‏‏یاں سرگرمیاں تاریخ برکینا فاسو@برکینا فاسو دی تریخ کی تحریکیں@د‏‏یاں تحریکاں کی پاکستانی اداکارائیں@د‏‏یاں پاکستانی اداکاراواں سال کی@سال د‏‏ی جیوتی@جیو‏‏تی کی بھارتی گلوکارائیں@د‏‏یاں بھارتی گلوکاراواں کی یادگاریں@د‏‏یاں یادگاراں کی اداکارائیں@دیاں اداکاراواں کی فلمیں@دیاں فلماں والی تنظیمیں@والیاں تنظیماں کی تنظیمیں@د‏‏یاں تنظیماں شاہ جہاں@شاہجہان شاہجہاں@شاہجہان گیتا@گی‏‏تا


سے کی@نال کیتی کی مائیں@د‏‏یاں مانواں لڑی گئیں@لڑیاں گئیاں نورجہاں@نورجہا‏‏ں دہائی کی پیدائشیں@دہائی دے جم کی عثمانی شخصیات@دیاں عثمانی شخصیتاں بائیں@کھبے ۱ ویں@۱ ویں ۲ ویں@۲ ویں ۳ ویں@۳ویں ۴ ویں@۴ ویں ۵ ویں@۵ ویں ۶ ویں@۶ ویں ۷ ویں@۷ ویں ۸ ویں@۸ ویں ۹ ویں@۹ ویں پیش کی@پیش کیت‏‏ی اٹھارویں@اٹھارویں اضافہ@وادھا وسیلوں@وسیلےآں اڈوں@اڈےآں نقشوں@نقشیاں نظر آئیں گے@نظر آن گے سے ملاقات@نال ملاقات کوت دیواغ@آئیوری کوسٹ برقیاتی@برقیا‏‏تی فہرست ممالک@دیس لسٹ چلیں@چلیاں دیہاتی@دیہا‏تی نور جہاں@نورجہاں لوٹ مار@لُٹ مار ہمارا@ساڈا جاتی تھیں@جاندیاں سن کیا تھا@کیتا سی کہلایا@اکھوایا جامعہ عثمانیہ@عثمانیہ یونیورسٹی میں@وچ اطلاعاتی@اطلاعا‏‏ت‏ی نامیاتی@نامیات‏‏ی لگا رکھی@لگ‏ا رکھی پوچھتے@پُچھدے بعد از مرگ@مرن مگروں سکتیں@سکدیاں لگا دی@لگا دتی لیں ہیں@لیاں نیں لیں ہیں۔@لیاں نیں۔ لیں تھیں@لیاں سن لیں تھیں۔@لیاں سن۔ دیں تھیں@دتیاں سن دیں تھیں۔@دتیاں سن۔ دائرۃ المعارف@انسائیکلوپیڈیا تھوڑی سی@تھوڑی جہی تھوڑے سے@تھوڑے جہے کیسا@کیویں دا خیموں@خیمےآں کیسی@کِداں د‏ی بندھی@بنھی کر لانا۔@کے لیانا۔ لانا۔@لیانا۔ ”ہم@”اسیں کیونکہ@کیونجے کپڑے@کپڑ‏ے وہ@اوہ بن کر@بن کے جنتا@جنت‏ا عائد کی@عائد کیتی سانپ@سپ مار کر@مار کے جھاگ@جھگ ٹانگیں@لتاں بڑھدے@ودھدے گھاس@گھاہ پھنسا کے@پھسا ک‏ے مادائیں@ماداواں کی جاتی ہیں۔@کیت‏یاں جاندیاں نیں۔ سینگ@سنگ سیدھے@سِدھے


بکروں@بکرےآں ابتدائی زندگی@مڈھلا جیون ہم مکت‏‏ب@ہ‏‏م مکت‏‏ب ملازمت کی@ملازمت کیت‏‏ی عاید کی@عاید کیتی رکھ کر@رکھ کے جملوں@جملےآں کھل کر@کھل کے ہندووَں@ہندوآں بتاکر@دس کے بتا کر@دس کے گاڑی@گڈی مقابلوں@مقابلےآں رہی ہیں@رہیاں نیں کی جاسکتی@کیت‏ی جاسکدی کی جائے@کیت‏ی جائے کیونکر@کِداں شعرا@شاعراں مذاکروں@مذاکرےآں لگاکر@لگاکے جوڑ کر@جوڑ کے جبوتی@جبوت‏ی زیریں@زیریں وقت گذرنے@ویلہ لنگھن ویسے@اوداں کتبوں@کتبےآں جا بجا@تھاں تھاں کی کتابوں@د‏‏یاں کتاباں کہ کیا@کہ کیہ کیا ہے ؟@کیہ اے ؟ آئیے@آؤ دھوکا@دھوکھا تبصروں@تبصرےآں جھلکتی@جھلکدی گانوں@گانےآں ڈالا@ڈالیا وجہ تسمیہ@ناں وجہ جوں جوں@جداں جداں کی مثالیں@د‏‏یاں مثالاں کی مثالوں@د‏‏یاں مثالاں فہرست@لسٹ ایک جیسا@اکو جیہا جتنی@جِنّی ہو تو@ہوئے تاں سے تعلق@نال تعلق اسی@ایس‏ے کی اقسام@دیاں قسماں کی ریاستیں@د‏‏یاں ریاستاں کی ریاستوں@د‏‏یاں ریاستاں پڑ چک‏ی@پے چک‏ی پنچایتی@پنچایت‏ی فوائد@فائدے حاصل ہوں@حاصل ہون کامیاب ہوں@کامیاب ہون میں بچہ ہوں@میں بچہ آں بوڑھے@بُڈھے ذا‏تی زندگی@ذا‏تی جیون کی جنگیں@دیاں جنگاں ڈراموں@ڈرامےآں غنڈوں@غنڈےآں چُن کر@چُن کے چن کر@چُن کے بڑھتی@ودھدی پانچوں@پنجاں آدھے@ادھے کی عورتیں@د‏‏یاں عورتاں کی شاخیں@د‏‏یاں شاخاں گرد و نواح@آلے دوالے انہی@انہاں تھی۔@سی۔ زلزلوں@زلزلےآں تھا؟@سی؟ خزانوں@خزانےآں


حکومتی@حکومت‏ی اگرچہ@بھانویں خواتین@سوانیاں انتخاباتی@انتخابات‏‏ی معلوماتی@معلومات‏‏ی موضوعاتی@موضوعات‏‏ی گیارہویں@گیارہویں نباتاتی@نباتات‏ی چھاپوں@چھاپےآں سوداگر@سوداگ‏‏ر نسلیاتی@نسلیات‏‏ی پاروتی@پاروت‏‏‏ی طیاروں@طیارےآں خدماتی@خدمات‏‏ی امریکا@امریکہ ٹیلوں@ٹیلےآں بانٹا@ونڈیا بانٹ@ونڈ بانٹتا@ودڈیا بانٹتی@ونڈدی بانٹتے@ونڈدے پیشوں@پیشےآں تاریخ بیلاروس@بیلاروس دی تریخ تاریخ یوکرین@یوکرین دی تریخ تاریخ جرمنی@جرمنی دی تریخ تاریخ روس@روس دی تریخ تاریخ لتھوونیا@لتھوونیا دی تریخ تاریخ پولینڈ@پولینڈ دی تریخ حیاتیاتی@حیاتیا‏تی تیئس@تیئیہ تیئیس@تیئیہ تیئیسویں@تیئیہویں تیئسویں@تیئیہویں چوبیس@چوویہہ چوبیسویں@چوویہویں پچیس@پچیہہ پچیسویں@پچیہویں چھبیس@چھبیہہ چھبیسویں@چھبیہویں ستائیس@ستائیہہ ستائیسویں@ستائیہویں اٹھائیس@اٹھائیہہ اٹھائیسویں@اٹھائیہویں انتیس@اُنتیہہ انتسویں@اُنتیہویں تیس@تِیہہ تیسویں@تِیہویں ہم منصب@ہ‏م منصب ہم نے@اسیں ہم عصر@ہ‏م عصر ہم ٹی وی@ہ‏م ٹی وی چھوڑنی@چھڈنی آفات@آفتاں کی خواتین@دیاں سوانیاں ضلعوں@ضلعےآں خانوادوں@خانوادےآں کی جاگیریں@د‏‏یاں جاگیراں دارلحکومت@راجگڑھ لاکر@لیا ک‏ے لا کر@لیا ک‏ے بھاگا@بھجیا بھاگے@بھجے دوڑتے@دوڑدے ڈرا@ڈریا بنا۔@بنیا۔ پھوٹنے@پھُٹنے کی منزلیں@د‏‏یاں منزلاں کناروں@کنارےآں شعبوں@شعبےآں اقسام@قسماں پرندوں@پرندےآں نقل و حمل@آوا جائی چلائی جاتی ہیں۔@چلا‏ئیاں جاندیاں نیں۔ عمارات@عمارتاں رہائش گاہیں@رہائش گاہاں نکالنا@کڈنا جیتے@جتے رہ کر@رہ ک‏ے د‏‏یاں جاگیراں@کی جاگیروں د‏‏یاں جاگیراں@کی جاگیریں کروا کر@کروا ک‏ے کی ملاقاتیں@د‏‏یاں ملاقاتاں ہوتی رہیں۔@ہُندیاں رہیاں۔ کتراتے@کترات‏ے کی تحریروں@د‏‏یاں تحریراں کی تحریریں@د‏‏یاں تحریراں کی خرابیوں@د‏‏یاں خرابیاں تہذیب@رہتل ثقافت@سبھیاچار لوگ@لوک آ کر@آ ک‏ے کی کہانیوں@د‏‏یاں کہانیاں مختلف مقامات@وکھ وکھ تھانواں پوتا@پوت‏ا مختلف قبائل@وکھ وکھ قبیلے ڈھونڈنا@لبھنا قبائل@قبیلے وھاں@اوتھے قائم کیں@قائم کیت‏یاں جینیاتی@جینیات‏ی بتائے@دسے دیوتا@دیوت‏ا مابین@وچکار راہیں@راہاں جنتا@جنت‏ا مرحلوں@مرحلےآں مکاشفاتی@مکاشفات‏ی کھال@کھل دھوئیں@دھوئیں پلٹتی@پلٹدی پھڑکتی@پھڑکدی بڑھائی@ودھائی بہانوں@بہانےآں کرا کر@کرا ک‏ے گاہیں@گاہاں لوگوں@لوکاں عقیدوں@عقیدےآں انجام دیں ہیں@انجام دتیاں نیں دیں ہیں@دتیاں نیں مشاہداتی@مشاہدات‏ی ارضیاتی@ارضیا‏تی کرشماتی@کرشما‏تی حادثاتی@حادّا‏تی نکالے@کڈے وعدوں@وعدےآں کی مشکلات@دیاں مشکلاں خدشات@خدشےآں خدشوں@خدشےآں کی فصلوں@د‏‏یاں فصلاں مانگیں۔@منگیاں۔ برسات@برسا‏‏ت بلتا@ہلدا دار الحکومت@راجگڑھ تخلیاتی@تخلیا‏تی کھلونوں@کھلونےآں مضافاتی@مضافات‏ی اکلوتی @اکلو‏تی اسلئے@اسلئی آٹھواں@اٹھواں نکالی@کڈی کی نصیحتوں@د‏‏یاں نصیحتاں اٹھتا@اٹھدا اٹھتی@اٹھدی اٹھتے@اٹھدے نکالتے@کڈدے


انجام دیں@انجام دتیاں خلیاتی@خلیاتی پھیلتی@پھیلدی اکثریتی@اکثریتی واقعاتی@واقعاتی تخیّلاتی@تخیّلاتی تخیلاتی@تخیلاتی رہتیں@رہندیاں جاتیں@جاندیاں کرتیں@کردیاں حمایتی@حمایتی مہتا@مہتا نکالتی@کڈدی ہم وطنوں@ہم وطناں بلدیاتی@بلدیاتی ساٹھ@سٹھ خطوں@خطےآں پھندوں@پھندےآں مخطوطوں@مخطوطےآں صوتیاتی@صوتیاتی صفاتی@صفاتی پکڑنا@پھڑنا الفاظ@لفظاں نواسے@دھوہتے نواسا@دھوہتا مناتے@مناندے معجزوں@معجزےآں مرتے@مردے آدھا@ادھا بہتا@وگدا دانتوں@دنداں بناتے@بناندے حاصل کی-@حاصل کيتی- خطروں@خطرےآں کھیتی@کھیتی پالا@پالیا کر ڈالا@کر دتا پھیلا۔@پھیلیا۔ کپڑوں@کپڑےآں دھاگوں @دھاگےآں پھسلتا@تِلکدا پردوں@پردےآں چھانٹا@چھانٹیا لسانیاتی@لسانیاتی پھیرا@پھیریا اکلوتی@اکلوتی جھوٹا@جھوٹھا ٹہرا@ٹہریا مظہریاتی@مظہریاتی ۔جب@۔جدوں فتووں@فتوےآں اس کی@اس دی خطبوں@خطبےآں بیٹھا@بیٹھیا باالفاظ دیگر@دوجے لفظاں وچ محققین@محققاں مصنفین@مصنفاں تاریخ ولادت@جم تریخ تاریخ وفات@موت تریخ اساتذہ@استاداں کپڑا@کپڑا خطوں@خطےآں پھندوں@پھندےآں مخطوطوں@مخطوطےآں صوتیاتی@صوتیاتی صفاتی@صفاتی پکڑنا@پھڑنا الفاظ@لفظاں نواسے@دھوہتے نواسا@دھوہتا مناتے@مناندے معجزوں@معجزےآں مرتے@مردے آدھا@ادھا بہتا@وگدا دانتوں@دنداں بناتے@بناندے حاصل کی-@حاصل کيتی- خطروں@خطرےآں کھیتی@کھیتی پالا@پالیا کر ڈالا@کر دتا پھیلا۔@پھیلیا۔ کپڑوں@کپڑےآں دھاگوں @دھاگےآں پھسلتا@تِلکدا پردوں@پردےآں چھانٹا@چھانٹیا لسانیاتی@لسانیاتی پھیرا@پھیریا اکلوتی@اکلوتی جھوٹا@جھوٹھا ٹہرا@ٹہریا مظہریاتی@مظہریاتی ۔جب@۔جدوں فتووں@فتوےآں اس کی@اس دی خطبوں@خطبےآں بیٹھا@بیٹھیا باالفاظ دیگر@دوجے لفظاں وچ محققین@محققاں مصنفین@مصنفاں تاریخ ولادت@جم تریخ تاریخ وفات@موت تریخ اساتذہ@استاداں کپڑا@کپڑا تی تھیں@دیاں سن تی تھیں۔@دیاں سن۔ تیں تھیں@دیاں سن تیں تھیں۔@دیاں سن۔ پڑھا@پڑھیا سے نکاح@نال نکاح سے شادی@نال شادی سے ملاقات@نال ملاقات سے دشمنی@نال دشمنی سے محبت@نال محبت سے نفرت@نال نفرت جسکا@جس دا جسکی@جس دی جسکے@جس دے اسکا@اس دا اسکی@اس دی ہم خیال@ہم خیال بلوا کر@بلوا کے محلاتی@محلاتی الاسکا@الاسکا گزار کر@گزار کے پائی تھیں۔@پائیاں سن۔ کی زبانیں@دیاں بولیاں لگیں@لگياں چلیں@چلياں دائیں@سجے کی جانیں@دیاں جاناں کی جانوں@دیاں جاناں اُنکی@اُنہاں دی سے پیار@نال پیار پڑ جاتا@پے جاندا سے ہوتی@نال ہُندی سے شادی@نال شادی کہہ کر@کہہ کے کسی اور سے@کسے ہور نال سے ملاقات@نال ملاقات دونوں کو@دوناں نوں بھول@بھُل بھیجتا@گھلدا ڈھونڈنے@لبھن ڈھونڈتا@لبھدا ڈھونڈتی@لبھدی ڈھونڈتے@لبھدے


ڈھونڈ@لبھ اپنی تحریروں@اپنیاں تحریراں مانی جاتی رہی تھیں@منیاں جاندیاں رہیاں سن قبل از اسلام@اسلام توں پہلے قبل از تاریخ@تریخ توں پہلے قبل از وقت@ویلے توں پہلے کی خواتین@دیاں عورتاں شماریاتی@شماریاتی تاریخ اسلام@اسلام کی تریخ دورانئے@دورانئے رہائشگاہیں@رہائشگاہاں رکھدی تھیں@رکھدیاں سن توڑا@توڑیا قبل مسیح@قبل مسیح سونپا@سونپیا لقموں@لقمےآں کاٹنی@کٹنی مارا@ماریا گنیز@گنیز خاتون@سواݨی شامل@شامل نشریاتی@نشریاتی پڑے گی@پوے گی پتوں@پتےآں بھرا@بھریا تمھارے@تواڈے بتائی جاتی ہیں@دسیاں جاندیاں نیں بھوکا@بھُکھا کی گئی تھیں@کیتیاں گئیاں سن موقع جال@ویب سائٹ پیسوں@پیسےآں ہم عصر@ہمعصر مدرسے میں@مدرسے وچ شعراء@شاعراں حیاتی@حیاتی مساجد@مسیتاں کی مساجد@دیاں مسیتاں آبادیاتی@آبادیاتی بعد ازاں@بعد وچ ترکی میں@ترکی وچ ککک@ککک کھولتے@کھولدے کیا ہے ؟@کیہ اے ؟ ہم آہنگی@ہم آہنگی نظریاتی@نظریاتی جرائد و رسائل@جریدے تے رسالے جرائد@جریدے رسائل@رسالے نسخوں@نسخےآں حیلوں@حیلےآں مناظروں@مناظرےآں پڑ گئے@پے گئے کر سکیں@کر سکن لکھی ہیں@لکھایاں نیں دی تھیں@دتیاں سن دی تھیں۔@دتیاں سن۔ کر دینے@کر دینے پیچھا@پِچھا سکڑتی رہیں۔@سکڑدیاں رہیاں۔ کر لینا@کر لینا سمجھوتے@سمجھوتے کر جانا@کر جانا ہلکا سا@ہلکا جہا زبوں حالی@مندی حالت کھینچا@کھِچیا علاوہ ازیں@استوں علاوہ ہم کو@سانوں ہمیں@سانوں پہنچانا@پہچانیا نغموں@نغمےآں معدودے چند@تھوڑے جہے چڑھی رہتیں@چڑھیاں رہندیاں بھوکوں@بھُکھیاں بلا قصد@بغیر ارادہ اٹھ@اٹھیا پڑجائے@پےجائے کی باتوں@دیاں گلاں مانی جاتی ہیں۔@منیاں جاندیاں نیں۔ مانی جاتی ہیں@منیاں جاندیاں نیں جیسی@ورگی چھوڑنے@چھڈنے پڑے@پئے کاٹا@کٹیا جھجکتے@جھجکدے ہدایتی@ہدایتی شروعاتی@شروعاتی دیہی@پینڈو مطالعاتی@مطالعاتی لکھ کر@لکھ کے بتائی گئیں۔@دسیاں گئیاں۔ کتب خانے@کتب خانے بہانوں@بہانےآں کر چکے@کر چکے کارندوں@کارندےآں پھینک@سُٹ پھینکنا@سُٹنا پھینکو@سُٹو پھینکیں@سُٹیاں لوٹا@لُٹیا ترقی دی@ترقی دتی محکموں@محکمےآں بڑھانے@ودھانے توڑتی ہیں@توڑدیاں نیں جیسے@جداں ایسے@ایداں دے کی دلیلیں@دیاں دلیلاں کی دلیلوں@دیاں دلیلاں کیا مرتبہ@کیہ مرتبہ کیا مفہوم@کیہ مفہوم کیا ہے ؟@کیہ اے ؟ کی کیا@دی کیہ حکومت کی،@حکومت کیتی، حکومت کی@حکومت کیتی پھرتا@پھردا پھرتی@پھردی پھرتے@پھردے اجاگر@اجاگر کیا مقام@کیہ مقام مقام کیا@مقام کیہ سترھویں@ستارھویں بہت کم@بوہت گھٹ بٹور کر@بٹور کے لیکر@لےکے لوٹنا@لُٹنا چھیننا@کھوہنا چھینا@کھوہیا مستقبل@مستقبل فلسفوں@فلسفےآں تاریخ پاکستان@پاکستان کی تریخ تاریخ پنجاب@پنجاب کی تریخ تاریخ سندھ@سندھ کی تریخ تاریخ بلوچستان@بلوچستان کی تریخ تاریخ افغانستان@افغانستان کی تریخ تاریخ بھارت@بھارت کی تریخ تاریخ ہندوستان@ہندوستان کی تریخ تاریخ ایران@ایران کی تریخ تاریخ عراق@عراق کی تریخ تاریخ سوریہ@شام کی تریخ تاریخ ترکی@ترکی کی تریخ تاریخ بنگلہ دیش@بنگلہ دیش کی تریخ تاریخ روس@روس کی تریخ تاریخ ازبکستان@ازبکستان کی تریخ تاریخ سعودی عرب@سعودی عرب کی تریخ تاریخ انگلستان@انگلستان کی تریخ تاریخ یورپ@یورپ کی تریخ تاریخ ایشیا@ایشیا کی تریخ تاریخ افریقہ@افریقہ کی تریخ تاریخ خیبر پختونخوا@خیبر پختونخوا کی تریخ تاریخ فلپائن@فلپائن کی تریخ تاریخ چین@چین کی تریخ تاریخ جاپان@جاپان کی تریخ تاریخ کشمیر@کشمیر کی تریخ تاریخ مصر@مصر کی تریخ تاریخ سوڈان@سوڈان کی تریخ تاریخ جرمنی@جرمنی کی تریخ تاریخ فرانس@فرانس کی تریخ تاریخ اسپین@سپین کی تریخ تاریخ برازیل@برازیل کی تریخ تاریخ تاجکستان@تاجکستان کی تریخ تاریخ ترکمانستان@ترکمانستان کی تریخ تاریخ آذربائیجان@آذربائیجان کی تریخ تاریخ لاہور@لہور کی تریخ تاریخ کراچی@کراچی کی تریخ تاریخ پشاور@پشاور کی تریخ تاریخ اردن@اردن کی تریخ تاریخ اسرائیل@اسرائیل کی تریخ تاریخ فلسطین@فلسطین کی تریخ تاریخ یونان@یونان کی تریخ تاریخ مراکش@مراکش کی تریخ تاریخ تیونس@تیونس کی تریخ تاریخ الجزائر@الجزائر کی تریخ تاریخ آرمینیا@آرمینیا کی تریخ تاریخ کویت@کویت کی تریخ تاریخ انڈونیشیا@انڈونیشیا کی تریخ تاریخ ملائشیا@ملائشیا کی تریخ تاریخ اطالیا@اٹلی کی تریخ تاریخ صومالیہ@صومالیہ کی تریخ تاریخ سری لنکا@سری لنکا کی تریخ


تاریخ سنگاپور@سنگاپور کی تریخ تاریخ پاکستان@پاکستان کی تریخ تاریخ پاکستان@پاکستان کی تریخ تاریخ پاکستان@پاکستان کی تریخ تاریخ پاکستان@پاکستان کی تریخ تاریخ پاکستان@پاکستان کی تریخ یہ@ایہ بگڑ کر@بگڑ کے حکمرانی کی@حکمرانی کیتی چھینی@کھوہی بدل کر@بدل کے گھس کر@وڑ کے تاریخ@تریخ اقلیتی@اقلیتی اعانتی@اعانتی دے کر@دے کے جامعہ پنجاب@پنجاب یونیورسٹی جامعہ کراچی@کراچی یونیورسٹی جامعہ کیمرج@کیمرج یونیورسٹی جامعہ اوکسفورڈ@اوکسفورڈ یونیورسٹی جامعہ الازہر@الازہر یونیورسٹی جامعہ زرعیہ@زرعی یونیورسٹی جامعہ تبریز@تبریز یونیورسٹی جامعہ تہران@تہران یونیورسٹی بھیجتے@گھلدے وہ کیا@اوہ کیہ یہ کیا@ایہ کیہ میں کیا@میں کیہ ہم کیا@اسیں کیہ آپ کیا@تسیں کیہ سکوں@سکےآں نکل کر@نکل کے شادی کی@شادی کیتی توجہ دی@توجہ دتی قلعوں@قلعےآں بتائی@دسی صلح کی@صلح کیتی الجھا@اُلجھیا ہنوز@حالے تک دے سکی۔@دے سکی۔ کارروائی کی@کارروائی کیتی ہم مذہب@ہم مذہب مقالوں@مقالےآں دعوتی@دعوتی استفادہ کیا@استفادہ کیتا موافقت کی@موافقت کیتی کا کیا@دا کیہ کی کیا@دی کیہ کے کیا@دے کیہ کی بنیادیں@دیاں بنیاداں کھڑی ہیں۔@کھڑیاں نیں۔ کردی گئیں ہیں،@کردتیاں گئیاں نیں، کردی گئی ہیں@کردتیاں گئیاں نیں کی یونیورسٹوں@دیاں یونیورسٹیاں پوتی@پوتی سیکھا@سکھیا امریکا میں@امریکا وچ چھوڑو@چھڈو بڑوں@وڈھیاں تعزیتی@تعزیتی کی عرب شخصیات@دیاں عرب شخصیتاں سوکھ@سُک برساتی@برساتی بھٹکتے@بھٹکدے لڑتے@لڑدے سنبھالا۔@سنبھالیا۔ سنبھالا@سنبھالیا ترانوں@ترانےآں کھنگالا@کھنگالیا مکالموں@مکالمےآں سلسلوں@سلسلےآں تراشتا@تراشدا جلتی@جلدی چھپتی@چھپدی چھپتی رہیں@چھپدیاں رہیاں معنوں@معنےآں ہوتی رہتی تھیں۔@ہُندیاں رہندیاں سن۔ قصبوں@قصبےآں داتا@داتا کولکاتا@کولکاتا سرسوتی@سرسوتی تربیتی@تربیتی کارخانوں@کارخانےآں سنا کے@سنا کے چیتھڑوں@چیتھڑےآں تودوں@تودےآں موسمیاتی@موسمیاتی آپ بیتی@آپ بیتی ڈکیتی@ڈکیتی ہوتی رہتی ہیں۔@ہُندیاں رہندیاں نیں۔ چھانا@چھانیا کی کانوں@دیاں کاناں بڑھ کر@ودھ کے بنیں@بنیاں دبا کر@دبا کے گرتا@ڈگدا کبھی کبھار@کدی کدائیں گرتی@ڈگدی ٹھہرتی@ٹھہردی شاذ و نادر@کدی کدائیں گھنٹے@گھینٹے گنتی@گنتی پھولوں@پھُلاں پھول@پھُل جوڑتی@جوڑدی بڑی کمپنیوں@وڈیاں کمپنیاں گئی ہیں۔@گئیاں نیں۔ گئی ہیں@گئیاں نیں ہفتوں@ہفتےآں میٹھا@مٹھا چل کر@چل کے چلتی ہیں@چلدیاں نیں رکتیں@رکدیاں کی ہوئی ہیں۔@کیتیاں ہوئیاں نیں۔ سکون@سکون مل کر@مل کے کاٹنے@کٹنے "میں@"میں ہم نے@اسیں چھاتی@چھاتی لٹکتی@لٹکدی کی آنکھیں@دیاں اکھاں اشخاص@لوک لگتے@لگدے حکام@حکام ساڑھے@ساڈھے کھولا@کھولیا کردیے۔@کردتے۔ تھک کر@تھک کے عہدوں@عہدےآں اٹھا کر@اٹھا کے ہوئی تھیں@ہوئیاں سن ہوئی تھیں۔@ہوئیاں سن۔ درجوں@درجےآں دے کر@دے کے طلاب@طالب علماں کرلی۔@کرلئی- کرلی@کرلئی جل کر@جل کے کی کتابوں@دیاں کتاباں کی کتابیں@دیاں کتاباں دیکھ کر@دیکھ کے والی نسلوں@والیاں نسلاں والی نسلیں@والیاں نسلاں پھکی@پھیکی اِسے@اِسنوں اِسکے@اِسدے پکڑنے@پھڑنے کاندھے@موڈھے قبل@پہلے پہنچ کر@پہنچ کے بعد از@بعد وچ جان کر@جان کے بھی،@وی، یکے بعد دیگرے@اَگڑ پِچھڑ اندازوں@اندازےآں دورانئے میں@دورانئے وچ اِسکی@اِسدی اُسکی@اُسدی کو۔@نوں۔ قصباتی@قصباتی فیتے@فیتے فرضیاتی@فرضیاتی اُسکے@اُسدے اِسکے@اِسدے ٹانگیں@لتاں پوچھنے@پُچھنے اُنکے@اُنہاں دے سے رابطہ@نال رابطہ اِسکا@اِسدا


بتاتا@دسدا لٹک کر@لٹک کے سے ملنے@نال ملن نکال ڈالا@کڈ دتا اُسکا@اُسدا چُکا@چُکیا کُھبا@کُھبیا پڑی ہوئی تھیں@پئیاں ہوئیاں سن کی گولیاں@دیاں گولیاں نکال کر@کڈ کے پراگندہ@وکھو وکھ کارناموں@کارنامےآں اچھا@چنگا چھوٹ@چھُٹ پڑپوتا@پڑپوتا سوریہ@شام الگ@وکھ لوٹنے@پرتن دودھ@دُدھ سجدوں@سجدےآں تعریف کی@تعریف کیتی لوٹ لیا@لُٹ لیا مارا گیا@ماریا گیا مارا گیا۔@ماریا گیا۔ نیزوں@نیزےآں سے میں@توں میں کر رہے@کر رہے کر دے۔@کر دے۔ میں میں@وچ میں لادا@لدیا تمھاری@تواڈی ہوں گا@ہواں گا چھوڑتے@چھڈدے سفارش کی@سفارش کیتی پیشنگوئی کی@پیشنگوئی کیتی جھوٹوں@جھوٹھیاں پاؤں@پیر فتنوں@فتنےآں باندھی@بنھی عجلت@چھیتی کرادی@کرادتی لوٹ آیا@پرت آیا لوٹ گیا@پرت گیا سکھائی@سکھائی کی میں@دی میں کے میں@دے میں کا میں@دا میں طرف میں@طرف میں ککک@کر دتا زندگی نامہ@جیون نچھاور@نچھاور کیا یہ@کیہ ایہ چاہئے@چاہیدا والیں@والیاں باتوں@گلاں ھ کی وفیات@ھ دیاں موتاں ھ کی پیدائشیں@ھ دے جم پوچھے@پُچھے ان کی تصانیف@انہاں دیاں لکھتاں اسکا@اس دا ان کا انتقال@انہاں دا انتقال چھوڑیں@چھڈن تاریکی میں@تاریکی میں شکایت کی@شکایت کیتی کر لیں@کر لین ماننا@مننا تائید کی@تائید کیتی اضلاع@ضلعے سے جنگ@نال جنگ کیا چاہتے@کیہ چاہندے سے ملاقات کی@نال ملاقات کیتی ء کی دہائی کی وفیات@ دی دہائی دیاں موتاں کرلی ہیں@کرلیاں نیں


چھوٹا سا@چھوٹا جہا ملتی ہیں@ملدیاں نیں ظاہر کی@ظاہر کیتی ٹکڑوں@ٹکڑےآں کرونگا@کراں گا ملی ہوئیں@ملیاں ہوئیاں آتی ہیں@آندیاں نیں روکتے@روکدے جاتی ہیں@جاندیاں نیں لگی تھیں@لگیاں سن کھنگالتے@کھنگلدے کھنگالتی@کھنگالدی کھنگالتا@کھنگالدا بتاتی@دسدی لگی ہیں@لگیاں نیں ملی تھیں@ملیاں سن تھی@سی تھا@س تھے@سن ہے@اے ہیں@نیں تعیناتی@تعیناتی جنسیاتی@جنسیاتی ملا کے@ملا کے اڑتے@اُڑدے اڑتی@اُڑدی اڑتا@اُڑدا ہندساتی@ہندساتی مزید پڑھیں@ہور پڑھو معطیاتی@معطیاتی خریدی تھیں@خریدیاں سن خریدی ہیں@خریدیاں نیں پڑ گیا@پے گیا ناکام@ناکام کیش کی@پیش کیتی بنگلوں@بنگلےآں گوشواروں@گوشوارےآں تحقیقاتی@تحقیقاتی اثاثوں@اثاثےآں کر رہی@کر رہی کر دیتی@کر دیندی کر دیتے@کر دیندے کر دیتا@کر دیتا کر سکی@کر سکی کر سکی۔@کر سکی۔ اوپر نیچے@اُتے تھلے اوپر@اُتے نیچے@تھلے پیچھے@پِچھے آگے@اگے جذباتی@جذباتی طبقاتی@طبقاتی معاملوں@معاملےآں کروںگا@کراں گا پنکھوں@پنکھےآں ملاقات کی@ملاقات کیتی گل بات@گل بات گھنٹوں@گھنٹےآں تینوں@تِناں کھڑی ہوئیں@کھڑیاں ہوئیاں کھڑی ہوئیں۔@کھڑیاں ہوئیاں۔ کیا کوئی@کیہ کوئی کر دیے۔@کر دتے۔ کر دی،@کر دتی، کر دی@کر دتی کر دی۔@کر دتی۔ جموں@جموں پتا چلا@پتا چلیا کر سکے۔@کر سکے۔ بولتا@بولدا سے قبل@توں پہلے پانچواں@پنجواں آتی رہیں،@آندیاں رہیاں، آتی رہیں@آندیاں رہیاں تھما@تھمیا کر دیتے@کر دیندے کاروائی کی@کارروائی کیتی رہتی ہیں۔@ رہندیاں نیں۔ رہتی ہیں@ رہندیاں نیں رہتی تھیں@رہندیاں سن مدرسوں@مدرسےآں گاڑیوں@گڈیاں جا سکا۔@جا سکیا۔ آ سکی۔@ آ سکی۔ ایک اور@اک ہور وبائیں@وباواں سوچا@سوچیا ہوتی-@ہُندی- چڑھا۔@چڑھیا۔ ڈالتے@ڈالدے بل بوتے@بل بوتے دریافت کی@دریافت کیتی بوجھ@بجھ کر دیں۔@کر دتیاں۔ کر دی@کر دتی مانگ@منگ گاؤں@پنڈ پناہ گزیں@پناہ گزیں اونٹنیوں@اونٹھنیاں کے لیے@دے لئی پہونچتے@پہونچدے قصیدوں@قصیدےآں اینٹوں@اِٹاں اینٹ@اِٹ نہیں کی@نئیں کیتی طلب کی@طلب کیتی ساتھ دیا@ساتھ دتا کہا میں@کہیا میں ناموں@ناواں دیئے@دتے ساٹھویں@سٹھویں کی جنگوں@دیاں جنگاں اگر میں@جے میں سے میں@توں میں کر دے@کر دے جاکر@جاکے کر گیا@کر گیا عطا کر@عطا کر چکیں@چکیاں کردی@کردتی اُسے@اُسنوں کر دینا@کر دینا کر رہے@کر رہے کر رکھا@کر رکھیا دھوپ@دُھپ کر گئی@کر گئی سنبھلتے@سنبھلدے گرتے@ڈگدے کنیز@کنیز بتانا@دسنا تمھیں@توانوں آئی ہیں@آئیاں نیں کتنے@کِنے زیارت کی@ریارت کیتی کی تصانیف@دیاں لکھتاں بنا ہوا@بنیا ہویا پوچھو@پُچھو کیا ان@کیہ انہاں کی باتوں@دیاں گلاں کی باتیں@دیاں گلاں باتیں@گلاں کر دئے@کر دتے کر دیے@کر دتے پوچھتا@پُچھدا میں تمھیں@میں توانو کر رہے@کر رہے پھر@فیر پاس سے@کولوں کر رکھا@کر رکھیا کیا اعتراض@کیہ اعتراض تمھین بتاؤں@توانو دساں بیچ میں@وچکار بیٹھتا@بیٹھدا اگر چہ@اگرچہ ہو سکی@ہوسکی جتنے@جِنّے کر دیں@کر دیؤ کتب خانہ@کتب خانہ

کتب@ کتاباں

لی تھیں@لیاں سن لی تھیں۔@لیاں سن۔ کرنا پڑے@کرنا پئے کرنا پڑے۔@کرنا پئے۔ اس لیے@اس لئی اس لئے@اس لئی ہم آہنگ@ہم آہنگ ہم جنس@ہم جنس گزرتیں@گزردیاں پوچھی تھیں@پُچھدیاں سن جنگ کی@جنگ کیتی جب میں@جدوں میں وہ لڑکا تھا@اوہ مُنڈا سی یہاں کچھ تھا@ایتھے کجھ سی وہ لڑکی تھی@اوہ کُڑی سی وہاں گاڑیاں تھے@اوتھے گڈیاں سن بتاتے@دسدے محسوس کی@محسوس کیتی دھمکی دی@دھمکی دتی پیداوار@پیداوار کر لیا@کر لیا پھنسے@پھسے فرشتوں@فرشتےآں کر سکتے@کر سکدے سیکھتے@سکھدے بیچا@ویچیا کر دی@کر دتی دی گئیں@دتیاں گئیاں یہیں@ایتھے بنتی ہیں@بندیاں نیں گھڑا@گھڑیا چھپتا@چھپدا نکلتا@نکلدا اس نے پڑھائی مکمل کر لی@اوہنے پڑھائی مکمل کر لئی کر لی@کر لئی کتب خانوں@کتب خانےآں سوجھ@سجھ کندھوں@کندھےآں جھگڑوں@جھگڑےآں چھپتے@چھپدے چھپتا@چھپدا تمھارا@تواڈا کیا لکھا@کیہ لکھیا لکھتی ہیں@لکھدیاں نیں کے لیے@دے لئی لیے@لئی کونسی@کیہڑی کیا ہیں@کیہ نیں برتا@ورتیا سیکھی@سکھی ڈھالا@ڈھالیا کر رہا۔@کر رہیا۔ جانا جاتا@جانیا جاندا کر دے@کر دے لے لیں۔@لے لین۔ جانچا۔@جانچیا۔ کیا فرق@کیہ فرق کیا مطلب@کیہ مطلب بھائیوں نے زمین تقسیم کر لی@بھائیاں نے زمین ونڈ لئی چکی تھیں@چکیاں سن کر رہا@کر رہیا ہیلسنکی@ہیلسنکی امریکا@امریکا راتوں رات@راتوں رات رہتی@رہندی کر چکی@کرچکی رہی تھیں@رہیاں سن بڑھے@ودھے کی فوجیں@دیاں فوجاں کرتی تھیں@کردیاں سن تقسیم@وںدڈ آدھی@ادھی چکی تھیں۔@چکیاں سن۔ پشاور@پشاور ماحولیاتی@ماحولیاتی زکام@زکام کر دینے@کر دینے


بچوں نے سکول جانے کی تیاری کر لی@بچےآں نے سکول جاݨ دی تیاری کرلئی کر رہی@کر رہی نوآبادیاتی@نوآبادیاتی زیر نگیں@زیر نگیں اسے جوری کر کے کیا ملا@اوہنوں چوری کر کے کیہ لبھیا کارناموں@کارنامےآں مسالوں@مسالےآں ماننے@مننے مکتب@مکتب پکڑی۔@پھڑی۔ استعمال کی@استعمال کیتی اور کیا@تے کیہ چاہیں@چاہن طریقوں@طریقےآں شکایتی@شکایتی چھڑنے@چھڈنے خطرناک@خطرناک زریں@زریں یہ زمیں ہماری ملیکت تھی@ایہ بھوئیں ساڈی ملکیت سی کر دوں@کر دواں کر سکتا-@کر سکدا۔ پگھلتے@پگھلدے کی باتوں@دیاں گلاں آب وہوا@آب وہوا آب و ہوا@آب و ہوا جیتا@جِتیا سائن کی@سائن کیتی دیکر@دے کے نظاروں@نظارےآں جسکو@جسنوں محنتی@محنتی چکی ہیں@چکیاں نیں جوڑتے@جوڑدے بولتے@بولدے باتیں@گلاں جھوٹ@جھوٹھ پھیلاکر@پھیلاکے تمہیں@توانوں کہیں@کدرے چلتے@چلدے راے۔@رہے۔ چھوڑنا@چھڈنا بھاگ@بھج اختیار کی۔@اختیار کیتی۔ تجرباندی@تجرباتی تجرباتی@تجرباتی بتایا@دسیا سماعت کی@سماعت کیتی دیکھیں@دیکھو گجراتی@گجراتی مالیاتی@مالیاتی ریاضیاتی@ریاضیاتی ترقیاتی@ترقیاتی پڑھیے@پڑھو فلکیاتی@فلکیاتی گر کر@ڈگ کے رکھتی تھیں۔@رکھدیاں سن۔ کیتی@کیتی جا کر@جا کے کرسکتی تھیں@کرسکدیاں سن کرتی رہیں۔@کردیاں رہیاں۔ پوتے@پوتے چلتی@چلدی بھاگتے@بھجدے دھماکوں@دھماکےآں قبول کی@قبول کیتی مذمت کی@مذمت کیتی خدمت کی@خدمت کیتی دوستی کی@دوستی کیتی حفاظت کی@حفاظت کیتی یکجہتی@یکجہتی دعائیں@دعاواں سزائیں@سزاواں ٹھکانوں@ٹھکانےآں ملا کر@ملا کے محلوں@محلےآں لے کر@لے کے تخلیق کی@تخلیق کیتی کرلیے@کرلیے کثیر الجہتی@کثیر الجہتی سہ جہتی@سہ جہتی جہتی@جہتی ہتھیار ڈالنا@ہتھیار سُٹنا تنکوں@تنکےآں معجزاتی@معجزاتی رکھ دی@رکھ دتی سکیں@سکن مواصلاتی@مواصلاتی نصب کی@نصب کیتی اطلاعتی@اطلاعتی کتب وتصانیف@کتاباں تے لکھتاں آپ کے جانور جاتے رہے@تواڈے ڈنگر جاندے رہے ملاکر@ملاکے چکی ہیں۔@چکیاں نیں۔ رہے۔@رہے۔ پیشکش کی@پیشکش کیتی کہے@کہے کہے۔@کہے۔ کی جامعات و کالج@دیاں یونیورسٹیاں تے کالج کی جامعات و دانشگاہیں@دیاں یونیورسٹیاں تے دانشگاہاں کی سرکاری جامعات@دیاں سرکاری یونیورسٹیاں کی تاسیسات@دیاں تاسیساں جامعات@یونیورسٹیاں آکر@آکے تجزیاتی@تجزیاتی تبصراتی@تبصراتی حادثاتی@حادثاتی مدد کی@مدد کیتی کی گئی ہیں۔@کیتیاں گئیاں نیں۔ یہ کیا ہے@ایہ کیہ اے تعمیراتی@تعمیراتی خرافاتی@خرافاتی کی گئی ہیں@کیتیاں گئیاں نیں ہوئی ہیں@ہوئیاں نیں نمائندوں@نمائندےآں ادا کی@ادا کیتی کاموں@کماں سمجھے@سمجھے ڈال دیتیں۔@ڈال دیندیاں۔ مانگتا@منگدا مل جاتی۔@مل جاندی۔ ناپا@ناپیا فاصلوں@فاصلےآں بنا کر@بنا کے خاکوں@خاکےآں بڑھنے@ودھنے ستاروں@ستارےآں طبیعیاتی @طبیعیاتی ذراتی@ذراتی نویاتی@نیوکلیئر کمیتی@کمیتی معمل@ری ایکٹر طبیعیات@فزکس اشعاع@ریڈی ایشن دھاتی@دھاتی کائناتی@کائناتی ہوتی ہیں@ہُندیاں نیں رہیں گے@رہن گے جتنا@جِنّا کر سکے۔@کر سکے۔ آپ حج نا کر سکے۔@تسیں حج نا کر سکے ہم محبت نا کر سکے@اسیں محبت نا کر سکے افرودیتی@افرودیتی رابطوں@رابطےآں جذبوں@جذبےآں سکتی ہیں@سکدیاں نیں پڑتا@پیندا صوتی@صوتی بڑھنا@ودھنا دھکیلتا@دھکیلدا یلتا@یلدا سیاروں@سیارےآں سیارچوں@سیارچےآں کی کوششیں@دیاں کوششاں دکھائی تھیں@دکھائیاں سن پڑتی@پیندی ٹوٹ کر@ٹُٹ کے ٹوٹتا@ٹُٹا ٹوٹ@ٹُٹ تصوراتی@تصوراتی سے ملتا@نال ملدا کیا آپ@کیہ تسیں کیا ہوا@کیہ ہویا کیا کیا@کیہ کیتا کیا تم@کیہ تسیں کیا آپ@کیہ تسیں ہو گا@ہوئے گا کتنی@کِنّی اُنئیں@اُنہاں نوں بندوں@بندےآں زمانوں@زمانےآں شیریں@شیریں کریں@کرن بہت سی@بہت ساریاں کون سے@کیہڑا گزارا@گزاریا آپ سے کیا چھپانا@تواڈے توں کیہ لُکانا چھوٹی سی فوج نے بہت بڑی فوج کو شکست دی@نکی جہی فوج نے بوہت وڈی فوج نوں شکست دتی شکست دی@شکست دتی مدد کی@مدد کیتی باندھنے@بنھن کیا میں@کیہ میں چھوڑتا@چھڈدا ہوکر@ہوکے فرماتی ہیں@فرماندیاں نیں کیا فرمایا@کیہ فرمایا پکڑ@پھڑ پکڑا@پھڑیا نفسیاتی@نفسیاتی اتنے@اِنّے پیچھے@پِچھے گوناگوں@وکھ وکھ پہنچا دیا@پہنچا دتا پہنچا چکا@پہنچا چکیا بلایا@بلایا کر کے@کر کے کیا میں@کیہ میں کیا آپ@کیہ تسیں کیا وہ@کیہ اوہ کیا ہم@کیہ اسیں کا میں@دا میں کی میں@دی میں باندھا@بنھیا کیا تھی@کیہ سی ہوتی تھیں@ہُندیاں سن معرکوں@معرکےآں کے لئے@دے لئی معذرت کی@معذرت کیتی بات چیت@گل بات ہوکر@ہوکے جیسوں@ورگیاں کیا کہا؟@کیہ کہیا؟ کیا کیا@کیہ کہیا مانگو@منگو ارادوں@ارادےآں ہتھیار ڈالنے@ہتھیار سُٹن باتیں کیں@گلاں کیتیاں ملامت کی@ملامت کیتی جھوٹے@جھوٹھے حوالہ جات@حوالے


ملتے@ملدے باشندوں@باشندےآں ہو سکتی ہیں۔@ہو سکدیاں نیں۔ اچھوتے@اچھوتے نویں@نویں سولہویں@سولہویں چودہویں@چودہویں پندرہویں@پندرہویں اٹھارہویں@اٹھارہویں اکیسویں@اکیہویں بائیسویں@بائیہویں بڑھا@ودھیا کی گئیں@کیتیاں گئیاں اچھے انسان جاتے رہے@چنگے انسان جاندے رہے سب لوگ ہمیں بلاتے رہے@سارے لوک سانوں بلاندے رہے چکی تھیں۔@چکیاں سن۔ عطا کی@عطا کیتی اتنی@اِنّی شہزادوں@شہزادےآں ہوتا@ہُندا ہوتی@ہُندی ہوتے@ہُندے کرسکیں@کرسکیاں ہنگاموں@ہنگامےآں لڑکی بہت خوبصورت ہے@کُڑی بوہت سوہنی اے گذرتا@گذردا تحریر کی@تحریر کیتی کرتی ہیں@کردیاں نیں نگار خانہ@مورتاں دستوں@دستےآں ترقیاتی@ترقیاتی حکومت ترقیاتی منصوبے بناتی رہتی ہے@سرکار ترقیاتی منصوبے بناندی رہندی اے اداروں@ادارےآں ممالک@ملکاں مہندس@انجینیئر راستوں@رستےآں دعووں@دعوےآں کر دی گئیں@کر دتیاں گئیاں مظاہروں@مظاہرےآں تیار کی@تیار کیتی چاہتی تھیں۔@چاہندیاں سن۔ قائم کی@قائم کیتی ترقی دی@ترقی دتی ہوئی تھیں۔@ہوئیاں سن۔ روانہ کی@روانہ کیتی چکیں ہیں۔@چکیاں نیں۔ گوشوں@گوشےآں کونوں@کونےآں کمروں@کمرےآں دروازوں@دروازےآں گزرا@گزریا گزارا@گزاریا صوفوں@صوفےآں پرچوں@پرچےآں میلوں@میلےآں جالوں@جالےآں تو بہت خوبصورت ہے@تو ڈھاڈی سوہنی اے پڑھیں@پڑھیاں وہ ہماری استانی تھی@اوہ ساڈی استانی سی چکیں ہیں@چکیاں نیں بڑھایا@ودھایا ذاتی@ذاتی سکتی@سکدی نمونوں@نمونےآں وصیت کی@وصیت کیتی اندھا@اَنھّا فرقوں@فرقےآں لاکھوں@لکھاں دیکھیے@ویکھو کی جاسکتی ہیں۔@کیتیاں جاسکدیاں نیں۔ کی جاسکتی ہیں@کیتیاں جاسکدیاں نیں کی شخصیات@دیاں شخصیتاں جولائی@جولائی جولائی کے مہینے میں سخت گرمی پڑتی ہے@جولائی دے مہینے وچ سخت گرمی پیندی اے نوازا@نوازیا کہلائے@اکھوائے کہلیائے@کہلائے پاکستان کا دارالحکومت اسلام آباد ہے@پاکستان دا راجگڑھ اسلام آباد اے کی نظمیں@دیاں نظماں رکھتی ہیں۔@رکھدیاں نیں۔ پاروں@پارےآں انیسویں@انیہویں تصانیف@لکھتاں افسانوں@افسانےآں نکال@کڈ کی بہت سی@دیاں بہت ساریاں بارہویں@بارہویں تیرہویں@تیرہویں کی جاتی@کیتی جاندی ترجیح دی@ترجیح دتی بھوک@بھکھ مین تمہارا دوست ہوں@مین تیرا یار آں کوچوں@کوچےآں جن میں سے@جنہاں وچوں کیا تم بھی میرے دوست ہو@کیہ تو وی میرا یار ایں جہاں تم وہاں میں@جتھے تو اوتھے میں پہنچا@پہنچیا فیصلوں@فیصلےآں قرضوں@قرضےآں قبیلوں@قبیلےآں نئے@نویں کی جاتی ہیں@کیتیاں جاندیاں نیں کوشش کی@کوشش کیتی دی گئی@دتی گئی لکھیں@لکھیاں وہ چوتھی جماعت میں پڑھتا ہے@اوہ چوتھی جماعت وچ پڑھدا اے مانتے@مندے مانتی@مندی مانتا@مندا آتا@آندا آتے@آندے آتی@آندی کرتا@کردا کرتی@کردی کرتے@کردے جنہیں@جنہاں نوں ملیں@ملیاں ہمیں@سانوں آپ چوتھی بار ہمارے گھر آئے ہیں@تسیں چوتھی وار ساڈے گھر آئے او آپ کا نام کیا ہے@تواڈا ناں کیہ اے جن کا@جنہاں دا جگہ دی@جگہ دتی ہوگا@ہوئے گا چکا@چکیا گاڑی جا چکی ہے@گڈی جا چکی اے چکی@چکی چلتا@چلدا دیں گے@دین گے رکھتی@رکھدی جانتا@جاندا والوں@والےآں پھوپھی@پھُپھی اتنا@اِنّا مجھ کو@مینوں ہو گا@ہوئے گا پھولنے@پھُلن بڑے@وڈے اُن@اُنہاں اِن@اِنہاں ڈالی@پائی روایت کی@روایت کیتی نقل کی@نقل کیتی بیان کی@بیان کیتی ذکر کی@ذکر کیتی واضع کی@واضع کیتی وضاحت کی@وضاحت کیتی تالیف کی@تالیف کیتی کر لیا@کر لیا میں نے@میں نے وہی@اوہی بڑھ@ودھ وہیں@اوتھے وہ سو چکا تھ@اوہ سو چکیا سی پڑھتی@پڑھدی پڑھتا@پڑھدا پڑھتے@پڑھدے مارتا@ماردا مارتی@مارتی مارتے@ماردے آنکھ@اکھ سکتی@سکتی سکتے@سکدے سکتا@سکدا بھیجتے@بھیجدے کئے@کیتے ہمارا@ساڈا ہماری@ساڈی ہمارے@ساڈے لکھتی@لکھدی لکھتا@لکھدا لکھتے@لکھدے کہتی@کہندی کہتا@کہندا کہتے@کہندے دیکھا@دیکھیا رکھا@رکھیا شرکت کی@شرکت کیتی جبکہ@جدوں کہ مخالفت کی@مخالفت کیتی کون سی@کیہڑی تماری آنکھیں نیلی ہیں@تیریاں اکھاں نیلیاں نیں آنکھوں@اکھاں بھیجا@بھیجیا جن کی@جنہاں دی وہ بہت بھوکےتھے@اوہ بوہت بھُکھے سن انہیں@انہاں نوں اسے@اسنوں ان میں سے@انہاں وچوں لکھا@لکھیا جائیں@جان وہ ان کے مہمان تھے@اوہ انہاں دے پروہنے سن کیا ہوا@کیہ ہویا ہو چکی تھیں@ہو چکیاں سن چلائی@ چلائی کو دی@نوں دتی حاصل کی@حاصل کیتی دیگر@ہور جن سے@جنہاں توں ہاتھ@ہتھ مسلمان@مسلمان حلقوں@حلفےآں تاہم@پر بقید حیات@زندہ پکارا@پکاریا مانگتے@منگدے کی گئی@کیتی گئی تھیں@سن دیتے@دیندے دیتا@دیندا دیتی@دیندی وہاں@اوتھے رہتے@رہندے رہتی@رہندی رہتا@رہندا بانٹ@ونڈ خاندان@ٹبر شاہی خاندان@راج ٹبر باپا@پیؤ بتانے@دسنے بتاتی@دسدی بتاتا@دسدا دیا@دتا کہا@کہیا ملف@تصویر میں سے@وچوں نہیں@نئیں جتوں@جسنوں اتوں@اسنوں کیے@کیتے آگ@اگ نکالا@کڈیا وہاں سے@اوتھوں گئیں@گئیاں ہوا ہو@ہویا ہوئے بہت سے@بوہت سارے جن کو@جنہاں نوں مدرسے@مدرسے مدرتوں@مدرسے یہی@ایہی بیعت کی@بیعت کیتی رہا@رہیا اہم@اہم یہاں@ایتھے ہوئیں@ہوئیاں رکھیں@رکھن ہوں گے۔@ہون گے۔ دیکھتے@دیکھدے جاگا@جاگیا ہمارا@ساڈا ہمیں@سانوں تھا،@سی، حوالہ جات@حوالے بیرونی روابط@باہرلے جوڑ کام@کم زائد@ودھ لاکھ@لکھ ایک@اک بڑی@وڈی جہاں سے@جتھوں ساتھ@نال ہوتا@ہُندا ملتا@ملدا جلتا@جلدا لگتا@لگدا حملوں@حملےآں


پہنچائی گئی ہی۔@پہنچائیاں گئیاں نیں کی گئی ہیں@کیتیاں گئیاں نیں پودوں@پودےآں رکھتے@رکھدے جسے@جسنوں پڑا@پیا آتے@آندے ان کے کارخانے@انہاں دے کارخانے ہاتھوں@ہتھوں کبھی@کدی جاتے@جاندے سمجھا@سمجھیا انہون نے ہمیں دعائیں دیں@اوہناں نے سانوں دعاواں دتیاں افریقہ@افریقہ آتا@آندا اعلی@اعلیٰ ادنی@ادنٰی مصطفی@مصطفیٰ امریکہ@امریکا افریقہ@افریقہ لکھی گئیں@لکھیاں گئیاں مزید دیکھیں@ہور دیکھو کی کتابیں@دیاں کتاباں صوبوں@صوبےآں بھائی@بھراء شخصیات@شخصیتاں بیرونی روابط@باہرلےجوڑ بہن@بھیݨ مذید@ہور کم از کم@گھٹ توں گھٹ ہوتی تھیں@ہُندیاں سن بقید حیات@زندہ پکارا@پکاریا پوچھا@پُچھیا اُنہیں@اُنہاں نوں وہ کیا کہے گہ@اوہ کیہ کہے گا تم کیا سنتے رہے@تو کیہ سُندا رہیا سنتے@سُندے سنتی@سُندی ساتویں@ستویں میں سے@وچوں بل بوتے@بل بوتے پانچ@پنج سات@ست آٹھ@اٹھ سترہ@ستاراں بہت کالے بادل آئے ہیں@بوہت کالے بدّل آئے نیں پچاس@پنجاہ چھٹی@چھیویں آٹھویں@اٹھویں علاقوں@علاقےآں ہو کر@ہو کے ہو گی@ہوئے گی ہوگی@ہوئے گی بادل@بدّل بڑا@وڈا باندھ@بنھ دونوں@دونے سنتا@سُندا چاہا@چاہیا چاہتے@چاہندے محموعوں@مجموعےآں پہنچتی ہیں۔@پہنچدیاں نیں۔ کی گئیں@کیتیاں گئیاں حصوں@حصےآں قصوں@قصےآں تھی۔@سی۔ اس نے ساری کتابیں پڑھیں@اوہنے ساریاں کتاباں پڑھیاں پڑھا@پڑھیا مجھے@مینوں مانگی@منگی مانگے@منگے مانگا@منگیا ملتیں@ملدیاں سکیں@سکیاں وہ دوڑ نا سکیں@اوہ دوڑ نا سکیاں مزید@ہور گہیوں@کنک کھائی۔@کھادی تصنیف کی@تصنیف کیتی پانچویں@پنجویں نیز@ہور بیٹوں@بیٹےآں کر لیں@کر لین کرتی ہیں۔@کردیاں ہیں۔ ہو کے@ہو کے تمہاری@تواڈی دی گئی ہیں۔@دتیاں گئیاں نیں۔ دیکھیں@دیکھیاں ہوں گے@ہون گے کریں گے@کرن گے خبر دی@خبر دتی تمہیں میں سے@تواڈے وچوں چھٹے@چھیویں بچوں@بچےآں نکالو@کڈھو چھوڑ کر@چھڈ کے چھوڑ@چھڈ لڑکوں@لڑکےآں آج@اج اونٹوں@اونٹھاں اونٹ@اونٹھ بڑھاتے@ودھاندے بڑھاتی@ودھاندی بڑھاتا@ودھاندا اونٹ@بوتا بڑھتے@ودھدے پہنچا دیا۔@پہنچا دتا۔ گھوڑوں@گھوڑےآں کھینچ@کھچ روایتی@روایتی گزرتے@لنگھدے گزرتا@لنگھدا گزرتی@لنگھدی کہاں@کتھے کیسے@کِداں بتاؤ@دسو یہاں سے@ایتھوں بدلتا@بدلدا بدلتی@بدلدی بدلتے@بدلدے جیسا@جداں چھین@کھو ڈوب@ڈُب ڈوبا@ڈُبیا ڈوبی@ڈُبی ڈوبے@ڈُبے تمہارے@تواڈے تمہارا@تواڈا تجھے@تینوں تجھ کو@تینوں اس صرف سے@اودھروں کیلئے@دے لئی جیسا میں چاہتا تھا ویسا ہی ہوا@جداں میں چاہندا سی اوداں ای ہویا دیکھیں@دیکھو انکے@انہاں دے اونچی@اُچی اونچے@اُچے اونچا@اُچا مانا@منیا سوچتے@سوچدے دونگا@دواں گا روکا@روکیا نصیحت کی@نصیحت کیتی دعوت دی@دعوت دتی دعا کی@دعا کیتی درخواست کی@درخواست کیتی گواہی دی@گواہی دتی آپکا@آپ دا آپکی@آپ دی آپکے@آپ دے دائیں صرف سے@سجےاوں بائیں صرف سے@کبھےاوں یہاں سے وہاں تک@ایتھوں اوتھے تک مہینوں@مہینےآں چھوڑے@چھڈے وہ پہلے کہاں رہتی تھیں@اوہ پہلے کتھے رہندیاں سن رہتی تھیں@رہندیاں سن دھی میٹھا ہے@دئیں مٹھا اے اُنہیں@اُنہاں نوں یہیں@ایتھے ای سنیں@سنیاں چھوڑی@چھڈی چھوڑیاں@چھڈیاں ہوتیں@ہُندیاں سمجھتے@سمجھدے سمجھتی@سمجھدی سمجھتا@سمجھدا دیکھتا@دیکھدا دیکھتی@دیکھدی دیکھتے@دیکھدے کھلتا@کھلدا کھلتی@کھلدی کھلتے@کھلدے اس کو@اسنوں اس کی@اوہدی مجھ سے@میرے توں تجھ سے@تیرے توں دودھ ابل رہا ہے@دُدھ ابل رہیا اے تجویز دی@تجویز دتی رہیں@رہیاں عرض کی@عرض کیتی کیوں@کیوں پوچھتی تھیں۔@پُچھدیاں سن۔ اِنہی@اِنہاں ملتی@ملدی یہیں@ایتھے واسطوں@واسطےآں پہنچتا@پہنچدا پہنچتے@پہنچدے پہنچتی@پہنچدی رسالوں@رسالےآں بے حرمتی کی@بے حرمتی کیتی دوسروں@دوسرےآں دسویں@دسویں سترہویں@ستارہویں پوتے@پوتے کی سعودی خواتین@دیاں سعودی عورتاں بیسویں@ویہویں چھوڑا@چھڈیا چور جھوثے تھے@چور جھوٹھے سن وہ لاہور سےآئیں@اوہ لہوروں آئیاں آئیں@آئیاں نئی@نویں بحث کی@بحث کیتی پڑی@پئی بات سن کر وہ رو پڑی@گل سن کے اوہ رو پئی نکلا@نکلیا پہلوؤں@پہلوآں ہوسدے@ہوسکے ہوسکے@ہوسکے ہو۔@ہوئے۔ مرتب کی@مرتب کیتی مزید دیکھیے@ہور ویکھو دیا جاتا@دتا جاندا رکھتا@رکھدا اتحاد القمری@کوموروس کوت داوواغ@آئیوری کوسٹ جزائر پٹکیرن@پٹکیرن جزیرے جزائر کیمین@کیمین جزیرے جزائر شمالی ماریانا@اتلے ماریانا جزیرے جزائر سلیمان@سولومن جزیرے ٹرینیڈاڈ و ٹوباگو@ٹرینیڈاڈ تے ٹوباگو بوسنیا و ہرزیگووینا@بوسنیا تے ہرزیگووینا جمہوریہ آئرستان@آئرلینڈ جزائر فاکلینڈ@فاکلینڈ جزیرے جزائر کک@کک جزیرے امریکی جزائر ورجن@امریکی ورجن جزیرے برطانوی جزائر ورجن@برطانوی ورجن جزیرے مجارستان@ہنگری جزائرفارو@فارو جزیرے جزائر فارو@فارو جزیرے جزائر مارشل@مارشل جزیرے کوت داوواغ@آئیوری کوسٹ جزائر پٹکیرن@پٹکیرن جزیرے جزائر کیمین@کیمین جزیرے جزائر شمالی ماریانا@اتلے ماریانا جزیرے جزائر سلیمان@سولومن جزیرے ٹرینیڈاڈ و ٹوباگو@ٹرینیڈاڈ تے ٹوباگو بوسنیا و ہرزیگووینا@بوسنیا تے ہرزیگووینا جمہوریہ آئرستان@آئرلینڈ جزائر فاکلینڈ@فاک لینڈ جزیرے جزائر کک@کک جزیرے امریکی جزائر ورجن@امریکی ورجن جزیرے برطانوی جزائر ورجن@برطانوی ورجن جزیرے مجارستان@ہنگری جزائرفارو@فارو جزیرے جزائر فارو@فارو جزیرے جزائر مارشل@مارشل جزیرے کے مقامات@دیاں تھانواں حوالہ جات@حوالے مذید دیکھیئے@ہور ویکھو اچھا@چنگا زیادہ@ودھ



  • تاریخ اسلام۔ عہدِ خلافت بنو اُمَیّہ: قسط: (99)*
  • ابومسلم خراسانی:*

ابومسلم کا نام ابراہیم بن عثمان بن بشار تھا، یہ ایرانی النسل تھا اور مشہور ہے کہ برز جمہر کی اولاد سے تھا، اصفہان میں پیدا ہوا تھا، ماں باپ نے کوفہ کے متصل ایک گاؤں میں آکر سکونت اختیار کرلی تھی، جس وقت ابومسلم کا باپ عثمان فوت ہوا تھا تو ابومسلم کی عمر سات برس کی تھی، اس کا باپ مرتے وقت وصیت کر گیا تھا کہ عیسیٰ بن موسیٰ بن سراج اس کی پرورش اور تربیت کرے، عیسیٰ اس کو کوفہ میں لے آیا۔

ابومسلم جامہ دوزی (درزی) کا کام عیسیٰ سے سیکھتا تھا اور اسی کے پاس کوفہ میں رہتا تھا، عیسیٰ بن موسیٰ اپنے زین اور چار جامے لےکر خراسان، جزیرہ اور موصل کے علاقوں میں فروخت کرنے کے لیے جاتا تھا اور اس تقریب سے اکثر سفر میں رہتا اور ہر طبقہ کے آدمیوں سے ملتا تھا اور اس کی نسبت یہ شبہ ہوا کہ یہ بھی بنو ہاشم اور علویوں کا نقیب ہے، اسی طرح اس کے خاندان کے دوسرے آدمیوں پر شبہ کیا گیا، نتیجہ یہ ہوا کہ یوسف بن عمر گورنر کوفہ نے عیسیٰ بن موسیٰ اور اس کے چچازاد بھائی ادریس بن معقل اور ان دونوں کے چچا عاصم بن یونس عجلی کو قید کر دیا، اسی قید خانہ میں خالد قسری کے گرفتار شدہ عمال بھی قید تھے۔

ابومسلم قیدخانہ میں عیسیٰ بن موسیٰ کی وجہ سے اکثر جاتا، جہاں تمام قیدی وہ تھے جن کو حکومت بنوامیہ سے نفرت تھی یا قید ہونے کے بعد لازماً نفرت پیدا ہو جانی چاہئے تھی، ان ہی میں بعض ایسے قیدی بھی تھے جو واقعی بنوعباس یا بنو فاطمہ کے نقیب تھے، لہٰذا ان لوگوں کی باتیں سن کر ابومسلم کے قلب پر بہت اثر ہوا اور وہ بہت جلد ان لوگوں کا ہمدرد بن کر ان کی نگاہوں میں اپنا اعتبار قائم کر سکا، اتفاقاً قحطبہ بن شبیب جو امام ابراہیم کی طرف سے خراسان میں کام کرتا اور لوگوں کو خلافت عباسیہ کے لیے دعوت دیتا تھا، خراسان سے حمیمہ کی طرف جا رہا تھا، راستے میں کوفہ کے ان قیدیوں سے بھی ملا، یہاں اسے معلوم ہوا کہ عیسیٰ و عاصم وغیرہ کا خادم ابومسلم بہت ہوشیار اور جوہر قابل ہے، اس نے عیسیٰ سے ابومسلم کو مانگ لیا اور اپنے ساتھ لے کر حمیمہ کی طرف روانہ ہو گیا، وہاں امام ابراہیم رحمہ اللہ تعالیٰ کی خدمت میں ابو مسلم کو پیش کیا، امام ابراہیم نے ابومسلم سے پوچھا کہ تمہارا نام کیا ہے؟ ابومسلم نے کہا کہ میرا نام ابراہیم بن عثمان بن بشار ہے، امام ابراہیم نے کہا: نہیں تمہارا نام عبدالرحمن ہے، چنانچہ اس روز سے ابومسلم کا نام عبدالرحمن ہو گیا، امام ابراہیم ہی نے اس کی کنیت ابومسلم رکھی اور قحطبہ بن شبیب سے مانگ لیا۔

چند روز تک ابومسلم امام ابراہیم کی خدمت میں رہا اور انہوں نے اچھی طرح ابومسلم کی فطرت و استعداد کا مطالعہ کیا، اس کے بعد اپنے مشہور نقیب ابونجم عمران بن اسماعیل کی لڑکی سے اس کا عقد کر دیا، ابونجم عمران بن اسماعیل ان لوگوں میں سے تھا جو خلافت اسلامیہ کو اولاد علی میں لانا چاھتے تھے، اس عقد سے یہ فائدہ حاصل کرنا مقصود تھا کہ ابومسلم کو شیعان علی کی حمایت حاصل رہے اور اس کی طاقت کمزور نہ ہونے پائے، اس انتظام و اہتمام کے بعد امام ابراہیم نے ابومسلم کو خراسان کی طرف روانہ کیا اور تمام دعاۃ و نقباء کو اطلاع دی کہ ہم نے ابومسلم کو خراسان کے تمام علاقے کا مہتمم بنا کر روانہ کیا ہے، سب کو دعوت بنو ہاشم کے کام میں ابومسلم کی فرماں برداری کرنی چاہئے۔

خراسان کے مشہور اور کار گزار نقباء جو محمد بن علی عباسی یعنی امام ابراہیم کے باپ کے زمانہ سے کام کر رہے تھے یہ تھے: سلیمان بن کثیر، مالک بن ہیثم، زیاد بن صالح، طلحہ بن زریق، عمر بن اعین یہ پانچوں شخص قبیلہ خزاعہ کے تھے، قحطبہ بن شبیب بن خالد بن سعدان یہ قبیلہ طے سے تعلق رکھتا تھا، ابوعینیہ، موسیٰ بن کعب لاہز بن قریط، قاسم بن مجاشع، اسلم بن سلام یہ چاروں تمیمی تھے، ابوداؤد خالد بن ابراہیم شیبانی، ابوعلی ہردی (اسی کو شبل بن طہمان بھی کہتے تھے) اور ابوالنجم عمران بن اسماعیل۔ 247 views 16:30

تاریخ اسلام(اردو) جب ابومسلم خراسان میں پہنچا تو سلیمان بن کثیر نے اس کو نوعمر ہونے کی وجہ سے واپس کر دیا، یہ تمام نقبا سن رسیدہ اور پختہ عمر کے تجربہ کار لوگ تھے، انہوں نے ایک نوعمر شخص کو اپنی خفیہ کارروائیوں اور رازداری کے خفیہ کاموں کا افسر و مہتمم بنانا خلاف مصلحت سمجھا۔

جس وقت ابومسلم خراسان پہنچا تھا اس وقت ابو داؤد خالد بن ابراہیم شیبانی ماوراء النہر کی طرف کسی ضرورت سے گیا ہوا تھا، وہ جب مرو میں واپس آیا اور امام ابراہیم کا خط اس نے پڑھا تو ابومسلم کو دریافت کیا، اس کے دوستوں نے کہا کہ سلیمان بن کثیر نے اس کو نوعمر ہونے کی وجہ سے واپس لوٹا دیا ہے کہ اس سے کوئی کام نہ ہو سکے گا اور یہ ہم سب کو اور ان لوگوں کو جنہیں دعوت دی جاتی ہے خطرات میں مبتلا کر دے گا، ابوداؤد نے تمام نقباء کو جمع کر کے کہا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم کو خدائے تعالیٰ نے اولین و آخرین کا علم دیا، آپ صلی اللہ علیہ و سلم کی عترت واہل بیت اس علم کے وارث ہیں اور آپ صلی اللہ علیہ و سلم کے اہل بیت معدن علوم اور ورثاء رسول ہیں، کیا تم لوگوں کو اس میں کچھ شک ہے؟ حاضرین نے کہا: نہیں، ابوداؤد نے کہا: تم نے کیوں شک وشبہ کو دخل دیا؟ اس شخص کو امام نے کچھ سوچ سمجھ کر اور اس کی قابلیت کو جانچ کر ہی تمہاری طرف بھیجا ہو گا۔

اس تقریر کو سن کر سب کو ابومسلم کے واپس کرنے کا افسوس ہوا، اسی وقت آدمی روانہ کیا گیا، وہ ابومسلم کو راستے سے لوٹا کر واپس لایا، سب نے اپنے تمام کاموں کا متولی، مہتمم ابومسلم کو بنا دیا اور بخوشی اس کی اطاعت کرنے لگے، چونکہ سلیمان بن کثیر نے اول اس کو واپس کر دیا تھا، اس لیے ابومسلم سلیمان بن کثیر کی طرف سے کچھ کبیدہ خاطر ہی رہتا تھا۔

۱۲۹ھ میں امام ابراہیم نے نقباء کو ہر طرف شہروں میں پھیلا دیا اور ابومسلم کو لکھ بھیجا کہ اس سال موسم حج میں مجھ سے آکر مل جاؤ، تاکہ تم کو تبلیغ دعوت کے متعلق مناسب احکام دیئے جائیں، یہ بھی لکھا کہ قحطبہ بن شبیب کو بھی اپنے ہمراہ لیتے آؤ اور جس قدر مال واسباب اس کے پاس جمع ہو گیا ہے وہ بھی لیتا آئے۔

اس جگہ یہ تذکرہ ضروری معلوم ہوتا ہے کہ ان خفیہ سازشوں کے لیے ایام حج بہترین موقع تھا، مکۂ معظمہ میں حج کے لیے دنیا کے ہر حصہ سے لوگ آتے تھے، کسی کو کسی کے آنے پر کوئی شبہ کا موقع نہ ملتا تھا اور سازشی لوگ بہ آسانی آپس میں مل کر ہر قسم کی گفتگو کر لیتے تھے اور حج کے موقع کو کبھی فوت نہ ہونے دیتے تھے۔

چنانچہ ابومسلم اور نقباء کو بھی ہمراہ لے کر مع قحطبہ بن شبیب امام سے ملنے کی غرض سے مکہ کی جانب روانہ ہوا، مقام قومس میں پہنچا تو امام ابراہیم کا خط ملا جس میں لکھا تھا کہ تم فوراً خراسان کی طرف واپس ہو جاؤ اور اگر خراسان سے روانہ نہ ہوئے ہو تو وہیں مقیم رہو اور اب اپنی دعوت کو پوشیدہ نہ رکھو، بلکہ اعلانیہ دعوت دینی شروع کر دو اور جن لوگوں سے بیعت لے چکے ہو ان کو جمع کر کے قوت کا استعمال شروع کر دو، اس خط کو پڑھتے ہی ابومسلم تو مرو کی جانب لوٹ گیا اور قحطبہ بن شبیب مال و اسباب لیے ہوئے امام ابراہیم کی جانب روانہ ہوا، قحطبہ نے جرجان کا راستہ اختیار کیا، اطراف جرجان میں پہنچ کر خالد بن برمک اور ابوعون کو طلب کیا، یہ لوگ مع مال و اسباب فوراً حاضر ہوئے، قحطبہ اس مال و اسباب کو بھی لے کر امام کی طرف چلا۔

==================> جاری ہے ۔۔۔

  • تاریخ اسلام۔ جلد ②، مولانا شاہ اکبر نجیب آبادی صاحب*

226 views 16:31

تاریخ اسلام(اردو) 217 views 16:43

تاریخ اسلام(اردو) تاریخ اسلام(اردو) Photo

  • تاریخ اسلام۔ عہدِ خلافت بنو اُمَیّہ: قسط: (100)*
  • خلافت بنو امیہ کے خلاف مختلف گروہوں کا آپس میں جنگ:*

جب ابومسلم کو اعلانیہ دعوت اور طاقت کے استعمال کی اجازت ملی تو یہ وہ زمانہ تھا کہ خراسان میں کرمانی اور نصر بن سیار کی لڑائیوں کا سلسلہ جاری تھا، جیسا کہ اوپر بیان ہو چکا ہے، ابومسلم نے اپنی جماعت کے لوگوں کو فراہم کیا اور ان کو لےکر کرمانی اور نصر بن سیار کے درمیان خیمہ زن ہوا اور بالآخر کرمانی قتل ہوا تو اس کا لڑکا علی بن کرمانی ابومسلم کے پاس آگیا اور ابومسلم نے نصر کو مرو سے خارج کر کے قبضہ کر لیا، مگر چند روز قیام کے بعد مرو سے خراسان کی جانب چلا آیا، نصر بن سیار نے مروان بن محمد خلیفہ دمشق کو امداد کے لیے خط لکھا تھا، مروان بن محمد ان دنوں ضحاک بن قیس خارجی سے مصروف جنگ تھا، وہ کوئی مدد نصر کے پاس نہیں بھیج سکا تھا، جن دنوں نصر کی عرض داشت مروان کے پاس پہنچی، ان ہی دنوں امام ابراہیم کا خط جو ابو مسلم کے نام انہوں نے روانہ کیا تھا اور جس میں لکھا تھا کہ خراسان میں عربی زبان بولنے والوں کو زندہ نہ چھوڑنا اور نصرو کرمانی دونوں کا خاتمہ کر دینا، پکڑا گیا اور الحمار کی خدمت میں پیش ہوا، یہی پہلا موقعہ تھا کہ بنوامیہ کو عباسیوں کی سازش کا حال معلوم ہوا، مروان نے علاقۂ بلقاء کے عامل کو لکھا کہ امام ابراہیم کو حمیمہ میں جاکر گرفتار کر لو، چنانچہ امام ابراہیم گرفتار ہو کر آئے اور مروان نے ان کو قید کر دیا، جیساکہ اوپر ذکر آچکا ہے۔

ابومسلم نے خراسان میں جب اعلانیہ دعوت و تبلیغ شروع کی ہے تو خراسان کے لوگ جوق در جوق اس کے پاس آنے لگے۔ ۱۳۰ ھ کے شروع ہوتے ہی ابومسلم نے کتاب اللہ اور سنت رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم کی پیروی اور اہل بیت نبوی کی اطاعت و فرماں برداری پر لوگوں سے بیعت لینی شروع کر دی، کرمانی، شیبان خارجی اور نصر بن سیار تینوں ابومسلم کے اس بیعت لینے اور لوگوں کے فراہم کرنے سے ناراض تھے، لیکن وہ اس طرح اپنی لڑائیوں میں مصروف تھے کہ ابومسلم کا کچھ نہ بگاڑ سکے، قتل کرمانی کے بعد علی بن کرمانی اپنے باپ کی جماعت کا سردار تھا، ادھر ابومسلم بھی کافی طاقت حاصل کر چکا تھا، نصر بن سیار اور شیبان خارجی بھی اسی درجہ کی طاقت رکھتے تھے، اب خراسان میں یہی چار طاقتیں موجود تھیں۔

ابومسلم نے شیبان خارجی کو اپنی طرف مائل کرنا چاہا اور ابن کرمانی کو اس کے پاس جانے کی تحریک کی، علی بن کرمانی شیبان خارجی کے پاس چلا گیا، نصر بن سیار نے شیبان خارجی سے صلح کرنی چاہی تاکہ وہ مطمئن ہو کر ابومسلم سے دو دو ہاتھ کرے، لیکن ابومسلم نے علی بن کرمانی کے ذریعہ ایسی کوشش کی کہ دونوں کی صلح نہ ہو سکے، جب ان دونوں کی صلح نہ ہوئی تو ابومسلم نے موقع مناسب دیکھ کر نصر بن نعیم کو ایک جمعیت کے ساتھ ہرات کی طرف روانہ کر دیا، نصر بن نعیم نے ہرات پہنچ کر بحالت غفلت ہرات پر قبضہ کر لیا اور نصر بن سیار کے عامل عیسیٰ بن عقیل بن معقل قریشی کو ہرات سے نکال دیا، یحییٰ ابن نعیم بن ہبیرہ شیبانی یہ سن کر ابن کرمانی کے پاس آیا اور کہا کہ تم نصر سے صلح کر لو، اگر تم نے نصر سے صلح کر لی تو ابومسلم فوراً نصر کے مقابلہ پر آمادہ ہو جائے گا اور تم سے کوئی تعرض نہ کرے گا اور اگر تم نے نصر سے صلح نہ کی تو ابومسلم نصر سے صلح کر کے تمہارے مقابلہ پر مستعد ہو گا، شیبانی نے فوراً نصر کو لکھا کہ ہم تم سے صلح کرنا چاہتے ہیں، نصر فوراً صلح پر آمادہ ہو گیا، کیونکہ اس کی پہلے ہی سے یہ خواہش تھی۔ 225 views 16:44

تاریخ اسلام(اردو) ابومسلم نے فوراً علی بن کرمانی کو جو شیبان خارجی کا شریک تھا توجہ دلائی کہ نصر بن سیار تمہارے باپ کا قاتل ہے، علی بن کرمانی یہ سنتے ہی شیبان خارجی سے جدا ہو گیا اور اس کے ساتھ لڑائیوں کا سلسلہ شروع کر دیا، ابومسلم ابن کرمانی کی مدد کے لیے پہنچا، ادھر نصر بن سیار شیبان خارجی کی طرف سے آمادۂ پیکار ہوا، یہ بھی عجیب زمانہ تھا، لڑنے والے چاروں گروہ مختلف الخیال اور مختلف العقیدہ تھے، مگر موقع اور وقت کی مناسبت سے ہر ایک دوسرے کو اپنے ساتھ ملا کر تیسرے کو فنا کرنے کی تدبیروں میں مصروف تھا، خالص شیعان علی بھی خراسان میں بکثرت تھے، وہ بھی سب ابومسلم کے ساتھ شریک تھے۔

عبداللہ بن معاویہ بن عبداللہ بن جعفر بن ابی طالب نے کوفہ میں لوگوں سے بیعت خلافت لی تھی، مگر عبداللہ بن عمر بن عبدالعزیز کے غالب ہو جانے پر وہ مدائن کی طرف چلے گئے تھے، ان کے ساتھ کوفہ کے بھی کچھ لوگ آئے تھے، پھر انہوں نے پہاڑی علاقے کا رخ کیا اور اس پر قابض ہو کر حلوان، قومس، اصفہان اور رے پر قابض ہوئے، اصفہان کو اپنی قیام گاہ بنایا، ۱۲۸ھ میں شیراز پر قبضہ کیا، جب یزید بن عمر بن ہبیرہ عراق کا گورنر مقرر ہو کر آیا تو اس نے عبداللہ بن معاویہ رضی اللہ عنہ کے مقابلہ کو لشکر روانہ کیا، اصطخر کے قریب جنگ ہوئی، عبداللہ بن معاویہ کو شکست ہوئی، ان کے بہت سے ہمراہی مارے گئے، منصور بن جمہور سندھ کی طرف بھاگ گیا، اس کا تعاقب کیا گیا، لیکن وہ ہاتھ نہ آیا، عبداللہ بن معاویہ کے ہمراہیوں سے جو لوگ گرفتار ہوگئے ان میں عبداللہ بن علی بن عبداللہ بن عباس بھی تھا، جس کو یزید بن عمر گورنر کوفہ نے رہا کر دیا، عبداللہ بن معاویہ فرار ہو کر ابومسلم کی طرف چلے، کیونکہ اس سے امداد کی توقع تھی کہ وہ اہل بیت کا ہوا خواہ ہے، لیکن وہ شیراز سے کرمان اور وہاں سے اول ہرات پہنچے، ہرات میں ابومسلم کے عامل نصر بن نعیم نے ان کو ٹھہرا کر ابومسلم کو ان کے آنے کی اطلاع دی، ابومسلم نے لکھ بھیجا کہ عبداللہ بن معاویہ کو قتل کر دو اور ان کے دونوں بھائیوں حسن و یزید کو رہا کر دو۔ چنانچہ نصر بن نعیم نے اس حکم کی تعمیل کر دی۔

۱۳۰ ھ کے شروع ہوتے ہی خراسان میں مذکورہ بالا چاروں طاقتیں ایک دوسرے سے ٹکرانے لگیں، آخر علی بن کرمانی اور ابومسلم نے نصر بن سیار اور شیبان خارجی کو شکست دےکر مرو پر مستقل قبضہ کر لیا، ابومسلم نے مرو کے دارالامارۃ میں جا کر لوگوں سے بیعت لی اور خطبہ دیا، نصر مرو سے شکست خوردہ سرخس اور طوس ہوتا ہوا نیشاپور میں آکر مقیم ہوا اور علی بن کرمانی ابومسلم کے ساتھ ساتھ رہنے لگا اور ہاں میں ہاں ملاتا رہا، شیبان خارجی جو مرو کے قریب ہی شکست خوردہ قیام پذیر تھا، اس کے پاس ابومسلم نے پیغام بھیجا کہ تم بیعت کر لو، اس نے جواب میں کہلا بھجوایا کہ تم ہی میری بیعت کر لو، اس کے بعد شیبان خارجی سرخس چلا گیا اور ایک گروہ بکر بن وائل کا اپنے گرد جمع کر لیا، یہ سن کر ابومسلم نے ایک دستہ فوج سرخس کی طرف روانہ کیا، وہاں لڑائی ہوئی اور شیبان خارجی مارا گیا۔

اس کے بعد ابومسلم نے اپنے نقیبوں میں سے موسیٰ بن کعب کو ابیورو کی طرف اور ابوداؤد خالد بن ابراہیم کو بلخ کی جانب بھیجا، دونوں کو کامیابی ہوئی، ابیورو اور بلخ پر جب قبضہ ہو گیا تو ابومسلم نے ابو داوٴد کو تو بلا بھیجا اور یحییٰ بن نعیم کو بلخ کا حاکم مقرر کر کے بھیج دیا۔

زیاد بن عبدالرحمن قسری نے جو حکومت بنو امیہ کی طرف سے بلخ کا عامل تھا اور ابوداؤد سے شکست کھا کر ترمذ چلا گیا تھا، یحییٰ ابن نعیم سے خط و کتابت کر کے اس کو اپنا ہم خیال بنا لیا اور مسلم بن عبدالرحمن باہلی اور عیسیٰ بن زرہ سلمیٰ، ملوک طخارستان، ملوک ماوراء النہر اور اہل بلخ و اہل ترمذ سب کو مجتمع کر کے اور یحییٰ بن نعیم کو مع اس کے ہمراہیوں کے ہمراہ لے کر ابومسلم کی جنگ کے لیے روانہ ہوئے، سب نے متفق ہو کر سیاہ پھریرے والوں (دعاۃ بنوعباس) سے لڑنے کی قسمیں کھائیں‘ اور مقاتل بن حیان نبطی کو اپنا شریک لشکر بنایا۔ 211 views edited 16:44

تاریخ اسلام(اردو) ابومسلم نے یہ کیفیت سن کر ابو داؤد کو دوبارہ بلخ کی جانب روانہ کیا، بلخ سے تھوڑے فاصلہ پر فریقین کا مقابلہ دریا کے کنارے ہوا، مقابل بن حیان نبطی کے ساتھ سردار ابوسعید قرشی تھا، ساقہ فوج کا پچھلا حصہ ہوتا ہے، اس حصہ کو مسلح اور زبردست اس لیے رکھا تھا کہ کہیں حریف دھوکہ دے کر پیچھے سے حملہ نہ کرے، جب لڑائی خوب زور شور سے شروع ہو گئی تو ابوسعید قرشی نے بھی اپنی متعلقہ فوج سے دشمنوں کا مقابلہ کرنا اور ان کو مار کر پیچھے بھگانا ضروری سمجھا، اتفاقاً ابوسعید کا جھنڈا بھی سیاہ تھا، وہ جب اپنی فوج لے کر متحرک ہوا تو لڑنے والے اگلی صفوں کے لوگ یہ بھول گئے کہ ہمارا بھی ایک جھنڈا سیاہ ہے، وہ ابوسعید کے جھنڈے کو دیکھتے ہی یہ سمجھے کہ دشمنوں کی فوج نے پیچھے سے ہم پر زبردست حملہ کیا ہے اور یہ ان ہی کی فوج فاتحانہ پیچھے سے بڑھتی چلی آتی ہے، چنانچہ ان کے ہاتھ پاؤں پھول گئے اور میدان چھوڑ کر بھاگ نکلے، بہت سے دریا میں غرق ہو کر ہلاک ہوئے، زیاد و یحییٰ ترمذ کی طرف چلے گئے اور ابوداؤد نے بلخ پر قبضہ کیا۔

اس فتح کے بعد ابومسلم نے ابوداؤد کو بلخ سے واپس بلا لیا اور بلخ کی حکومت پر نصر بن صبیح مزنی کو مامور کیا، جیسا کہ اوپر بیان ہو چکا ہے علی بن کرمانی ابومسلم کے پاس رہتا تھا اس کے ساتھ اس کا بھائی عثمان بن کرمانی بھی تھا، ابوداؤد نے ابو مسلم کو رائے دی کہ ان دونوں بھائیوں کو ایک دوسرے سے جدا کر دینا نہایت ضروری ہے، ابو مسلم نے اس رائے کو پسند کر کے عثمان بن کرمانی کو بلخ کی حکومت پر نامزد کر کے بھیج دیا، عثمان بن کرمانی نے بلخ پہنچ کر فرافصہ بن ظہیر کو اپنا نائب بنایا اور خود مع نصر بن صبیح کے مرورود چلا گیا، یہ خبر سن کر مسلم بن عبدالرحمن باہلی نے ترمذ سے مصریوں کو ہمراہ لے کر بلخ پر حملہ کیا اور بزور شمشیر اس پر قابض ہو گیا۔

عثمان و نصر کو اس کی اطلاع ہوئی تو وہ مرورود سے بلخ کی طرف روانہ ہوئے، ان کے آنے کی خبر سن کر عبدالرحمن کے ہمراہی راتوں رات بھاگ نکلے، نصر نے ایک سمت سے اور عثمان نے دوسری سمت سے بلخ پر حملہ کیا تھا، نصر کے ہمراہیوں نے تو بھاگنے والوں سے کوئی تعرض نہ کیا، لیکن عثمان بن کرمانی نے لڑائی چھیڑ دی اور خود ہزیمت اٹھا کر بھاگ نکلے اور بہت سے مارے گئے اور بلخ پر قبضہ ہوتے ہوتے رہ گیا، یہ خبر سن کر ابومسلم اور ابوداؤد نے مشورہ کیا، ابومسلم تو نیشاپور کی طرف روانہ ہوا اور ابوداؤد پھر بلخ کی جانب آیا، ابومسلم کے ہمراہ علی بن کرمانی تھا، ابومسلم نے نیشاپور کے راستے میں علی بن کرمانی کو قتل کیا اور ابوداؤد نے مشورہ کے موافق بلخ پر قابض ہو کر اور عبدالرحمن کو بلخ سے بھگا کر عثمان بن کرمانی کو قتل کر دیا، اس طرح ان دونوں بھائیوں کے خرخشے کو مٹایا۔

==================> جاری ہے ۔۔۔

  • تاریخ اسلام۔ جلد ②، مولانا شاہ اکبر نجیب آبادی صاحب*

213 views edited 16:44

تاریخ اسلام(اردو) 215 views 17:59

تاریخ اسلام(اردو) تاریخ اسلام(اردو) Photo

  • تاریخ اسلام۔ عہدِ خلافت بنو اُمَیّہ: قسط: (101)*
  • خلافت بنو امیہ کے مختلف علاقوں پر باغیوں کا حملہ اور قبضہ:*

اوپر پڑھ چکے ہو کہ امام ابراہیم نے ابومسلم کو اول حج کے موقع پر ملاقات کے لئے بلایا تھا، پھر اس کو روک دیا تھا کہ اعلانیہ دعوت شروع کر دے، ابومسلم نے قحطبہ بن شبیب کو مال و اسباب کے ساتھ روانہ کیا تھا، امام ابراہیم سے قحطبہ نے ملاقات کی، مال و اسباب پیش کیا، امام ابراہیم نے ایک جھنڈا قحطبہ کے ہاتھ روانہ کیا اور مکہ معظمہ سے خراسان کی جانب رخصت کر دیا اور حمیمہ کی طرف چلے آئے، یہاں آتے ہی گرفتار ہو کر قید ہوئے، قحطبہ یہ جھنڈا لے کر ابومسلم کے پاس آیا اور ابومسلم نے اس جھنڈے کو مقدمۃ الجیش میں رکھا اور قحطبہ بن شبیب کو مقدمۃ الجیش کا سردار بنایا اور ۱۳۰ھ کے ختم ہونے سے پہلے پہلے خراسان کے بڑے حصے پر قابض و متصرف ہو کر ایک ایک دشمن کا قصہ پاک کیا۔

علی بن کرمانی کے قتل سے فارغ ہو کر ابومسلم مرو کی طرف لوٹ آیا اور قحطبہ کو چند سرداران لشکر ابوعون عبدالملک بن یزید، خالد بن برمک عثمان بن نہیک اور خازم بن خزیمہ وغیرہ کے ساتھ طوس کی جانب روانہ کیا، اہل طوس نے مقابلہ کیا اور شکست کھائی، قحطبہ نے بڑی بے دردی سے ان کا قتل عام کیا، اس کے بعد قحطبہ نے تمیم بن نصر پر جو مقام سوزقان میں تھا حملہ کی تیاری کی، تمیم بن نصر مع تین ہزار ہمراہیوں کے مقتول ہوا، قحطبہ نے شہر میں داخل ہو کر قتل عام کیا اور خالد بن برمک کو مال غنیمت کی فراہمی پر مامور کیا، اس کے بعد قحطبہ نے نیشاپور کا قصد کیا، یہاں نصر بن سیار مقیم تھا، وہ نیشاپور سے قومس بھاگ آیا، قحطبہ شروع رمضان ۱۳۰ھ میں نیشاپور پر قابض ہوا اور آخر شوال تک نیشاپور میں مقیم رہا، نصر بن سیار کی مدد کے لیے یزید بن عمر بن ہبیرہ کے گورنر کوفہ نے نباتہ بن حنظلہ کے ماتحت ایک فوج کوفہ سے بھیجی تھی، نصر بن سیار قومس میں بھی زیادہ دنوں نہ ٹھہرا، وہاں سے وہ جرجان چلا آیا، وہیں نباتہ بن حنظلہ مع اپنی فوج کے نصر بن سیار کے پاس پہنچا، قحطبہ نے شروع ذی قعدہ میں نیشاپور سے جرجان کی جانب کوچ کیا۔

قحطبہ کے ہمراہیوں نے جب یہ سنا کہ نباتہ بن حنظلہ عظیم الشان لشکر شام کے ساتھ جرجان میں پہنچ گیا ہے تو وہ خوفزدہ ہوئے، قحطبہ نے ان کو ایک پرجوش خطبہ دیا اور کہا کہ امام ابراہیم نے پیشگوئی کی ہے کہ تم لوگ ایک بڑی فوج کا مقابلہ کر کے اس پر فتح پاؤ گے، اس سے لشکریوں کے دل بڑھ گئے، آخر معرکۂ کارزار گرم ہوا، نباتہ بن حنظلہ مع دس ہزار آدمیوں کے مارا گیا، قحطبہ کو فتح عظیم حاصل ہوئی، اس نے نباتہ بن حنظلہ کا سرکاٹ کر ابومسلم کے پاس بھیج دیا، یہ لڑائی شروع ماہ ذی الحجہ ۱۳۰ھ میں ہوئی، قحطبہ نے جرجان پر قبضہ کیا، تیس ہزار اہل جرجان کو قتل کر ڈالا۔

شکست جرجان کے بعد نصر بن سیار خوارالرائے کی طرف چلا آیا، وہاں کا امیر ابوبکر عقیلی تھا، یزید بن عمر ہبیرہ کو جب یہ حالات معلوم ہوئے تو اس نے ایک بہت بڑا لشکر ابن غعلیف کی سرداری میں نصر بن سیار کی امداد کے لیے روانہ کیا، قحطبہ نے جرجان سے اپنے لڑکے حسن بن قحطبہ کو خوارالرائے کی طرف روانہ کیا اور عقب سے ایک لشکر ابو کامل اور ابوالقاسم صحرز بن ابراہیم اور ابوالعباس مروزی کی سرداری میں حسن کی امداد کے لیے روانہ کیا، لیکن جب یہ لوگ حسن کے لشکر کے قریب پہنچے تو ابوکامل اپنے ہمراہیوں سے جدا ہو کر نصر سے جا ملا اور اس کو حسن کے لشکر کی نقل و حرکت سے آگاہ کر دیا، آخر لڑائی ہوئی اور حسن بن قحطبہ کو شکست فاش حاصل ہوئی، نصر نے مال غنیمت اور فتح کا بشارت نامہ یزید بن عمر بن ہبیرہ کے پاس روانہ کیا، یہ واقعہ محرم ۱۳۱ھ کا ہے، ادھر سے نصر بن سیار کے قاصد مال غنیمت اور فتح کی خوشخبری لیے ہوئے جا رہے تھے، ادہر سے ابن غعلیف فوج لیے ہوئے آرہا تھا، مقام رے میں دونوں کی ملاقات ہوئی، ابن غعلیف نے خط اور مال غنیمت لے لیا اور رے میں قیام کردیا۔ 222 views 18:00

تاریخ اسلام(اردو) نصر کو یہ خبر سن کر سخت ملال ہوا، جب نصر نے خود رے کا قصد کیا تو ابن غعلیف مع فوج ہمدان کی جانب روانہ ہو گیا، مگر ہمدان کو چھوڑ کر اصفہان چلا گیا، نصر دو روز تک رے میں مقیم رہا، تیسرے روز بیمار ہو گیا، بیمار ہوتے ہی رے سے کوچ کر دیا، مقام سادہ میں پہنچا تھا کہ ۱۲ربیع الاول ۱۳۱ھ کو فوت ہو گیا، اس کے ہمراہی اس کی وفات کے بعد ہمدان چلے گئے۔

رے کا عامل حبیب بن یزید نہشلی تھا، نصر کی وفات کے بعد جب قحطبہ بن شبیب جرجان سے فوج لے کر رے کی طرف آیا تو حبیب بن یزید اور اہل شام جو اس کے پاس موجود تھے، بلامقابلہ رے چھوڑ کر چل دیئے، قحطبہ نے رے پر قبضہ کیا اور اہل رے کے اموال و اسباب ضبط کئے، رے کے اکثر مفرور ہمدان چلے گئے۔

قحطبہ نے رے سے ہمدان کی طرف اپنے بیٹے حسن کو روانہ کیا، لیکن یہ لوگ ہمدان چھوڑ کر نہاوند کی جانب چلے گئے، حسن نے نہاوند پہنچ کر نہایت مضبوطی سے محاصرہ ڈال دیا۔ یزید بن عمر بن ہبیرہ نے ۱۲۹ھ میں اپنے بیٹے داود بن یزید کو عبداللہ بن معاویہ سے لڑنے کو بھیجا تھا اور داؤد بن یزید کرمان تک ان کا مقابلہ کرتا ہوا چلا گیا تھا داؤد کے ساتھ عامر بن صبارہ بھی تھا، یہ دونوں کرمان میں پچاس ہزار کی جمعیت سے مقیم تھے، جب یزید بن عمر بن ہبیرہ کو نباتہ بن حنظلہ کے مارے جانے کا حال معلوم ہوا تو اس نے داؤد اور ابن صبارہ کو لکھا کہ تم قحطبہ کے مقابلہ کو بڑھو، یہ دونوں پچاس ہزار فوج کے ساتھ کرمان سے روانہ ہوئے اور اصفہان جا پہنچے، قحطبہ نے ان کے مقابلہ کے لیے مقاتل بن حکیم کہبعی کو مامور کیا، اس نے مقام قم میں قیام کیا۔

ابن صبارہ نے یہ سن کر کہ حسن بن قحطبہ نے نہاوند کا محاصرہ کر رکھا ہے، نہاوند کے بچانے کا ارادہ کیا اور اس طرف روانہ ہوا اور مقاتل سے مل کر اور اس کو ہمراہ لے کر ابن صبارہ قحطبہ کے مقابلہ کو روانہ ہوا، جب دونوں لشکروں کا مقابلہ ہوا تو قحطبہ کے ہمراہیوں نے ایسی جاں بازی سے حملہ کیا کہ ابن صبارہ کے لشکر کو ہزیمت ہوئی اور وہ خود بھی مارا گیا۔ یہ واقعہ ماہ رجب ۱۳۱ھ کا ہے۔

قحطبہ نے اس فتح کی خوشخبری اپنے بیٹے حسن کے پاس کہلا بھجوائی اور خود اصفہان میں بیس روز قیام کیا، پھر حسن کے پاس آکر محاصرہ میں شریک ہو گیا، تین مہینے تک اہل نہاوند محاصرہ میں رہے، آخر نہاوند فتح ہو گیا اور بہت سے آدمی اہل نہاوند کے قتل کئے گئے، اس کے بعد قحطبہ نے حسن کو حلوان کی طرف روانہ کیا، حلوان بآسانی قبضہ میں آگیا، پھر قحطبہ نے ابوعون عبدالملک بن یزید خراسانی کو شہر زور پر حملہ کرنے کو بھیجا، یہاں کا عامل عثمان بن سفیان تھا، اس کے مقدمۃالجیش پر عبداللہ بن مروان بن محمد تھا، ابوعون اور عثمان کی آخری ذی الحجہ تک لڑائی ہوتی رہی، آخر عثمان مارا گیا، اس کی فوج کو شکست ہوئی، ابو عون عبدالملک نے بلاد موصل پر قبضہ کر لیا۔

جب عامر بن صبارہ مارا گیا تو داؤد بن یزید اپنے باپ کے پاس بھاگ آیا، داؤد بن یزید نے جب یزید بن عمر بن ہبیرہ کو اس شکست کا حال سنایا تو وہ ایک عظیم الشان لشکر لے کر چلا، خلیفہ مروان بن محمد نے بھی حوثرہ بن سہیل باہلی کو اس کی کمک کے لیے روانہ کیا، یزید بن عمر بن ہبیرہ مع حوثرہ بن سہیل حلوان پہنچا، قحطبہ بھی یہ سن کو حلوان کی طرف چلا اور دجلہ کو انبار کی طرف عبور کیا، یزید بن عمر نے بھی کوفہ کی طرف مراجعت کی اور حوثرہ کو پندرہ ہزار کی جمعیت سے آگے کوفہ کی طرف بڑھنے کا حکم دیا، قحطبہ نے انبار سے ۸ محرم ۱۳۲ھ کو دریائے فرات عبور کیا۔ 216 views 18:00

تاریخ اسلام(اردو) اس وقت ابن ہبیرہ دہانۂ فرات پر ۲۳ فرسنگ (ایک فرسنگ، تین میل کے برابر ہوتا ہے۔) کے فاصلہ پر خیمہ زن تھا، ہمراہیوں نے اس کو رائے دی کہ کوفہ چھوڑ کر خراسان کا قصد کیجئے، قحطبہ مجبوراً کوفہ کا ارادہ ترک کر کے ہمارے تعاقب میں آئے گا، یزید بن عمر نے اس رائے سے اختلاف کر کے دجلہ کو مدائن سے عبور کیا اور دونوں لشکر بقصد کوفہ فرات کے دونوں جانب سفر کرنے لگے، فرات کے ایک پایاب مقام پر قحطبہ نے دریا کو عبور کیا، سخت لڑائی ہوئی، یزید بن عمر بن ہبیرہ کی فوج کو شکست ہوئی، مگر قحطبہ بن شبیب بھی مارا گیا، قحطبہ جب معن بن زائدہ کے مارنے سے زخمی ہو کر گرا تو اس نے وصیت کی کہ کوفہ میں شیعان علی کی امارت قائم ہونی چاہئے اور ابوسلمہ کو امیر بنانا چاہئے۔

حوثرہ و یزید بن عمر بن ہبیرہ و ابن نباتہ بن حنظلہ واسط کی طرف بھاگے، قحطبہ کی فوج نے حسن بن قحطبہ کو اپنا سردار بنایا، اس واقعہ کی خبر کوفہ میں پہنچی تو محمد بن خالد قصر امارت میں داخل ہو کر قابض ہو گیا۔

اس واقعہ کا حال سن کر حوثرہ واسط سے کوفہ کی طرف لوٹا، محمد بن خالد قصر امارت میں محصور ہوگیا، مگر حوثرہ کے ہمراہیوں نے دعوت عباسیہ کو قبول کر کے حوثرہ سے جدا ہونا شروع کیا، وہ مجبوراً واسط کی طرف واپس چلا گیا، محمد بن خالد نے اس واقعہ کی اطلاع اور اپنے قصر امارت میں قبضہ ہونے کی اطلاع ابن قحطبہ کو دی، حسن بن قحطبہ کوفہ میں داخل ہوا اور محمد بن خالد کو ہمراہ لے کر ابوسلمہ کے پاس حاضر ہوا اور ابوسلمہ کو بطور امیر منتخب کر کے بیعت کی، ابوسلمہ نے حسن بن قحطبہ کو ابن ہبیرہ کی جنگ کے لیے واسط کی طرف روانہ کیا اور محمد بن خالد کو کوفہ کا حاکم مقرر کیا، اس کے بعد ابوسلمہ نے حمید بن قحطبہ کو مدائن کی طرف روانہ کیا، اہواز میں عبدالرحمن بن عمر بن ہبیرہ امیر تھا، اس سے اور بسام سے جنگ ہوئی، عبدالرحمن شکست کھا کر بصرہ کی جانب بھاگا، بصرہ میں مسلم بن قتیبہ باہلی عامل تھا، بسام نے عبدالرحمن کو شکست دے کر بصرہ کی حکومت پر سفیان بن معاویہ بن یزید بن مہلب کو مامور کر کے بھیجا، ماہ صفر ۱۳۲ھ میں لڑائی ہوئی اور مسلم نے فتح پائی اور وہ بصرہ پر اس وقت تک قابض رہا جب تک کہ اس کے پاس یزید بن عمر کے مارے جانے کی خبر پہنچی۔

اس خبر کو سن کر وہ بصرہ سے نکل کھڑا ہوا اور میدان خالی پا کر محمد بن جعفر نے خروج کر کے بصرہ پر قبضہ کیا، چند روز کے بعد ابومالک عبداللہ بن اسید خزاعی ابومسلم کی طرف سے وارد بصرہ ہوا، ابوالعباس سفاح نے اپنی بیعت خلافت کے بعد سفیان بن معاویہ کو بصرہ کا عامل مقرر کیا۔

==================> جاری ہے ۔۔۔

  • تاریخ اسلام۔ جلد②، مولانا شاہ اکبر نجیب آبادی صاحب*

222 views 18:01

تاریخ اسلام(اردو) 235 views 16:50

تاریخ اسلام(اردو) تاریخ اسلام(اردو) Photo

  • تاریخ اسلام۔ عہدِ خلافت بنو اُمَیّہ: قسط: (102)*
  • کوفہ میں ابوالعباس عبداللہ سفاح کے ہاتھ پر بیعت:*


امام ابراہیم کی وفات کے وقت حمیمہ میں ان کے خاندان کے مندرجہ ذیل حضرات موجود تھے۔ ابوالعباس عبداللہ سفاح، ابوجعفر اور عبدالوہاب۔ یہ تینوں امام ابراہیم کے بھائی تھے، محمد بن ابراہیم، عیسیٰ بن موسیٰ، داؤد عیسیٰ، صالح، اسماعیل، عبداللہ، عبدالصمد۔ یہ آخرالذکر شخص جو امام ابراہیم کے چچا تھے، امام ابراہیم نے گرفتاری سے پہلے اپنے بھائی ابوالعباس عبداللہ سفاح کو اپنا جانشین مقرر فرمایا تھا اور مرتے وقت ابوالعباس عبداللہ سفاح کے لیے وصیت کی تھی کہ کوفہ میں جا کر قیام کریں، چنانچہ اس وصیت کے موافق ابوالعباس عبداللہ سفاح مع مذکورہ بالا اہل خاندان حمیمہ سے روانہ ہو کر کوفہ میں آیا، ابوالعباس جب کوفہ میں پہنچا ہے تو یہ زمانہ تھا کہ کوفہ میں ابوسلمہ کی حکومت قائم ہو چکی تھی، ابوسلمہ کوفہ میں امام ابراہیم کی طرف سے قائم مقام اور مرکز کوفہ میں تحریک کا مہتمم تھا، لیکن اب اس کی تمام تر کوششیں اولاد علی رضی اللہ عنہ کو خلیفہ بنانے میں صرف ہونے لگی تھیں، قحطبہ بن شبیب بھی اسی خیال کا آدمی تھا، لیکن چونکہ ابوہاشم بن محمد نے وصیت کر دی تھی کہ محمد بن علی عباسی کو ان کی جماعت کے تمام آدمی اپنا پیشوا تسلیم کریں، اس لیے وہ اس آخری نتیجے کے متعلق کوئی فیصلہ نہ کر سکا تھا۔

جب ابوالعباس کے قریب پہنچنے کی خبر پہنچی تو ابوسلمہ مع شیعان علی بغرض استقبال حمام اعین تک آیا اور ابوالعباس کو ولید بن سعد کے مکان پر ٹھہرایا اور کل شیعان علی وسپہ سالاران لشکر سے چالیس دن تک اس راز کو پوشیدہ رکھا، ابوسلمہ نے چاہا کہ آل ابی طالب میں سے کسی شخص کو خلیفہ منتخب کر کے اس کے ہاتھ پر بیعت کی جائے، لیکن ابوجہم نے جو شیعان علی میں سے تھا، اس رائے کی مخالفت کی اور کہا کہ کہیں آل ابی طالب خلیفہ سے محروم نہ رہ جائیں اور لوگ ابوالعباس ہی کو خلیفہ تسلیم نہ کر لیں، اگر ابوالعباس امام ابراہیم کی وصیت کے موافق کوفہ میں نہ آگیا ہوتا تو بہت زیادہ ممکن تھا کہ ابوسلمہ آل ابوطالب کو خلیفہ بنانے میں کامیاب ہو جاتا۔

ابوسلمہ نہیں چاہتا تھا کہ لوگوں کو ابوالعباس کے آنے کی اطلاع ہو اور وہ اس کی طرف متوجہ ہونے لگیں، چنانچہ ابوسلمہ نے اس عرصہ میں امام جعفر صادق بن امام باقر بن امام زین العابدین بن حسین بن علی رضی اللہ عنہ کو خط لکھا کہ آپ کوفہ میں آیئے اور خلیفہ بن جایئے، انہوں نے جواب میں انکار کیا، اتفاقاً لوگوں کو ابوالعباس سفاح کے کوفہ میں آجانے کی اطلاع ہو گئی، کوفہ میں اب دو قسم کے لوگ موجود تھے، ایک وہ جو آل عباس کی خلافت کے خواہاں تھے، دوسرے وہ جو آل ابی طالب کو خلیفہ بنانے کے خواہش مند تھے، عباسیوں کے طرف داروں نے سنتے ہی ابوالعباس سفاح کے پاس آنا جانا شروع کیا اور ان کے ساتھ ہی شیعان علی بھی ان کے پاس آنے جانے لگے، جب لوگوں کو یہ معلوم ہوا کہ ابوسلمہ حاکم کوفہ نے جو وزیر اہل بیت کے لقب سے مشہور تھا، ابوالعباس عبداللہ سفاح کے ساتھ مہمان نوازی کے لوازم و شرائط میں ادائیگی میں کوتاہی کی ہے تو بہت سے شیعان علی بھی عبداللہ سفاح کے ہمدرد و ہوا خواہ بن گئے اور اس طرح ابوالعباس عبداللہ سفاح کی کوفہ کی موجودگی نے لوگوں کی توجہ اور ہمدردی کو اپنی طرف منعطف کر لیا۔

آخر ۱۲؍ ربیع الاول بروز جمعہ ۱۳۲ھ ۳۰؍ اکتوبر ۷۲۹ ء کو لوگوں نے مجتمع ہو کر ابوالعباس عبداللہ سفاح کو اس کی جائے قیام سے ہمراہ لیا اور دارالامارۃ میں داخل ہوئے، عبداللہ سفاح دارالامارۃ سے جامع مسجد میں آیا، خطبہ دیا، نماز جمعہ پڑھائی اور نماز جمعہ کے بعد پھر منبر پر چڑھ کر خطبہ دیا اور لوگوں سے بیعت لی، یہ خطبہ نہایت فصیح و نصیح تھا، اس میں اپنے آپ کو مستحق خلافت ثابت کیا اور لوگوں کے وظائف بڑھانے کا وعدہ کیا، اہل کوفہ کی ستائش کی۔

اس خطبہ کے بعد عبداللہ سفاح کے چچا داؤد نے منبر پر چڑھ کر تقریر کی اور بنوعباس کی خلافت کے متعلق مناسب الفاظ بیان کر کے بنوامیہ کی مذمت کی اور لوگوں سے بیان کیا کہ آج امیرالمئومنین عبداللہ سفاح کسی قدر بخار واعضاء شکنی کی تکلیف میں مبتلا ہیں، اس لیے زیادہ بیان نہ کر سکے، آپ سب لوگ ان کے لیے دعا کریں۔

اس کے بعد ابوالعباس عبداللہ سفاح قصر امارت کی طرف روانہ ہوا اور اس کا بھائی ابوجعفر منصور مسجد میں بیٹھا ہوا رات تک لوگوں سے بیعت لیتا رہا، ابوالعباس عبداللہ سفاح بیعت خلافت لینے کے بعد قصر امارت میں گیا، پھر وہاں سے ابوسلمہ کے خیمہ میں جا کر اس سے ملاقات کی، ابوسلمہ نے بھی بیعت تو کرلی، مگر وہ دل سے اس بیعت اور عباسیوں کی خلافت پر رضا مند نہ تھا۔ 253 views edited 16:50

تاریخ اسلام(اردو) عبداللہ سفاح نے مضافات کوفہ کی نیابت اپنے چچا داؤد کو دی اور اپنے دوسرے چچا عبداللہ بن علی کو ابوعون کی کمک کے لیے روانہ کیا اور اپنے بھتیجے عیسیٰ بن موسیٰ کو حسن بن قحطبہ کی مدد کے لیے بھیجا، جو واسط کا محاصرہ کئے ہوئے پڑا تھا اور ابن ہبیرہ کو محصور کر رکھا تھا اور یمیمی بن جعفر بن تمام بن عباس کو حمید بن قحطبہ کی امداد پر مدائن کی طرف روانہ کیا، اسی طرح سرداروں کو ہر طرف متعین و مامور کیا۔

ابومسلم خراسان ہی میں موجود تھا اور وہ خراسان کو جلد از جلد دشمنوں سے صاف کر رہا تھا، عبداللہ سفاح کوفہ میں خلیفہ ہو کر ہر ایک اہم معاملہ میں ابومسلم کا مشورہ طلب کرتا تھا اور جیسے ابومسلم لکھتا تھا، اسی کے موافق عمل درآمد کرتا تھا۔

یہ زمانہ تمام عالم اسلامی میں بڑا نازک اور خطرناک زمانہ تھا، ہر ایک ملک اور ہر ایک صوبہ میں جابجا لڑائیاں اور فسادات برپا تھے، واسط میں ابن ہبیرہ کو مغلوب کرنا آسان نہ تھا، ادھر مروان بن محمد اموی خلیفہ شام میں موجود تھا، حجاز میں بھی طوائف الملوکی برپا تھی، مصر کی حالت بھی خراب تھی، اندلس میں عباسی تحریک کا کوئی مطلق اثر نہ تھا، جزیرہ وآرمینیا میں اموی سردار موجود تھے اور عباسیوں کے خلاف تحریک پر آمادہ ہوگئے تھے، خراسان بھی پورے طور پر قابو میں نہ آیا تھا، بصرہ میں بھی عباسی حکومت قائم نہ ہو سکتی تھی، حضر موت و یمامہ و یمن کی بھی یہی حالت تھی۔

عبداللہ سفاح کے خلیفہ ہوتے ہی آل ابی طالب یعنی علویوں میں جو اب تک شریک کار تھے، ایک ہلچل سی پیدا ہو گئی تھی اور وہ اس نتیجہ پر حیران اور ناراض تھے، کیونکہ ان کو اپنی خلافت کی توقع تھی، عباسیوں کی اس کامیابی میں سب سے بڑا دخل محمد بن حنفیہ کے بیٹے ابوہشام عبداللہ کی اس وصیت کو ہے جو انہوں نے مرتے وقت محمد بن علی بن عبداللہ بن عباس کے حق میں کی تھی، اس وصیت کی وجہ سے شیعوں کے فرقہ کیسانیہ۱؎ کا یہ عقیدہ قائم ہوا کہ سیدنا علی ابی طالب کے بعد محمد بن حنفیہ امام تھے۔ (اس فرقہ کے لوگ محمد بن حنفیہ کو جو علی رضی اللہ عنہ کی غیر فاطمی اولاد تھے، اپنا امام مانتے ہیں اور اس کی دلیل یہ دیتے ہیں کہ انہوں نے بصرہ میں اپنی امامت کا اعلان کیا تھا۔ (غنیۃ الطالبین‘ شیخ عبدالقادر جیلانی‘ ص ۲۰۰)

ان کے بعد ان کے بیٹے ابوہشام عبداللہ امام ہوئے، ان کے بعد محمد بن علی عباسی ان کے جانشین اور امام تھے، اس طرح شیعوں کی ایک بڑی جماعت شیعوں سے کٹ کر عباسیوں میں شامل ہو گئی اور علویوں یا فاطمیوں کو کوئی موقع عباسیوں کے خلاف کھڑے ہونے کا نہ مل سکا، وہ اندر ہی اندر پیچ و تاب کھا کر رہ گئے۔

جب مروان بن محمد آخری اموی خلیفہ مارا گیا تو حبیب بن مرہ حاکم بلقاء نے عبداللہ سفاح کے خلاف خروج کیا اور سفید جھنڈے لے کر نکلا، ادھر عامل قنسرین بھی اٹھ کھڑا ہوا، حالانکہ اس سے پہلے وہ عبداللہ بن علی عباسی کے ہاتھ پر بیعت کر چکا تھا، اہل حمص بھی اس کے شریک ہو گئے، ادھر آرمینیا کے گورنر اسحاق بن مسلم عقیلی نے عباسیوں کے خلاف خروج کیا، ان تمام بغاوتوں کو فرو کرنے کے لیے عبداللہ سفاح نے اپنے سرداروں اور رشتہ داروں کو بھیجا اور بتدریج کامیابی حاصل کی، لیکن یزید بن عمر بن ہبیرہ ابھی تک واسط پر قابض و متصرف تھا اور کوئی سردار اس کو مغلوب و مفتوح نہ کر سکا تھا، آخر مجبور ہو کر یزید بن عمر بن ہبیرہ سے ابوجعفر منصور اور عبداللہ سفاح نے جا کر صلح کی اور یزید بن عمر بیعت پر آمادہ ہوا، لیکن ابو مسلم نے خراسان سے عبداللہ بن سفاح کو لکھا کہ یزید بن عمر کا وجود بے حد خطرناک ہے، اس کو قتل کر دو، چنانچہ دھوکہ سے منصور عباسی نے اس کو قتل کرا دیا اور اس خطرہ سے نجات حاصل کی۔ 230 views edited 16:51

تاریخ اسلام(اردو) اب کوفہ میں ابومسلمہ باقی تھا اور بظاہر کوئی موقع اس کے قتل کا حاصل نہ تھا، کیونکہ عباسی اس ابتدائی زمانہ میں شیعان علی کی مخالفت اعلانیہ نہیں کرنا چاہتے تھے، ابوسلمہ کے متعلق تمام حالات لکھ کر ابومسلم کے پاس خراسان بھیجے گئے اور اس سے مشورہ طلب کیا گیا، ابومسلم نے لکھا کہ ابوسلمہ کو فوراً قتل کرا دینا چاہیئے، اس پر عبداللہ سفاح نے اپنے چچا داؤد بن علی کے مشورہ سے ابومسلم کو لکھا کہ اگر ہم اس کو قتل کریں گے تو ابوسلمہ کے طرف داروں اور شیعان علی کی جانب سے اعلانیہ مخالفت اور بغاوت کا خطرہ ہے، تم وہاں سے کسی شخص کو بھیج دو جو ابوسلمہ کو قتل کر دے، ابومسلم نے مراد بن انس کو ابوسلمہ کے قتل پر مامور کر کے بھیج دیا، مراد نے کوفہ میں آکر ایک روز کوفہ کی کسی گلی میں جب کہ ابوسلمہ جا رہا تھا اس پر تلوار کا وار کیا، ابوسلمہ مارا گیا، مراد بن انس بھاگ گیا اور لوگوں میں مشہور ہوا کہ کوئی خارجی ابوسلمہ کو قتل کر گیا۔

اس قتل کے بعد ابومسلم نے اسی طرح سلیمان بن کثیر کو بھی قتل کرا دیا، یہ وہی سلیمان بن کثیر ہے جس نے ابومسلم کو شروع میں وارد خراسان ہونے پر واپس کرا دیا تھا اور ابوداؤد نے ابومسلم کو راستے سے واپس بلایا تھا، غرض ابومسلم نے چن چن کر ہر ایک اس شخص کو جو اس کی مخالفت کر سکتا تھا، قتل کرا دیا۔

==================> جاری ہے ۔۔۔

  • تاریخ اسلام۔ جلد②، مولانا شاہ اکبر نجیب آبادی صاحب*

240 views edited 16:51

تاریخ اسلام(اردو) 243 views 16:45

تاریخ اسلام(اردو) تاریخ اسلام(اردو) Photo

  • تاریخ اسلام۔ عہدِ خلافت بنو اُمَیّہ: قسط: (103)*

{آخری قسط:}

  • بنو امیہ کا عباسیوں کے ہاتھ سے قتل عام:*

خلافت اسلامیہ کو جو قوم یا خاندان وراثتاً اپنا حق سمجھے، وہ سخت غلطی اور ظلم میں مبتلا ہے، بنو امیہ نے اگر حکومت اسلامی کو اپنی ہی قوم اور خاندان میں باقی رکھنا چاہا تو یہ ان کی غلطی تھی، بنوعباس، بنوہاشم اگر اس کو اپنا خاندانی حق سمجھتے تھے تو یہ ان کی بھی (غلطی و نا انصافی تھی)، مگر چونکہ دنیا میں عام طور پر لوگ اس غلطی میں مبتلا ہیں، لہٰذا سلطنت اور حکومت میں بھی حق وراثت کو جاری سمجھا جاتا ہے، اس بناء پر جو شخص کسی غاصب سلطنت سے اپنا حق سلطنت واپس چھینتا ہے، وہ اکثر قتل و تشدد سے کام لیا کرتا ہے، لیکن اس قتل و تشدد کو بنوعباس نے بنو امیہ کے حق میں جس طرح روا رکھا ہے، اس کی مثال کسی دوسری جگہ نظر نہیں آتی۔

ہاں تاریخی زمانہ سے گزر کر اگر نیم تاریخی حکایات کو قابل اعتنا سمجھا جائے تو بخت نصر نے بنی اسرائیل کے قتل کرنے میں بڑی سفاکی و بیباکی سے کام لیا تھا اور بنی اسرائیل کو صفحۂ ہستی سے مٹا دینا چاہا تھا، مگر ہم دیکھتے ہیں کہ بنی اسرائیل کی قوم آج تک دنیا میں موجود ہے، اس سے بھی بڑھ کر ہندوستان میں آریوں نے غیر آریوں پر ظلم و ستم کی انتہا کر دی تھی، مگر کوہ ہمالیہ وبندہیاچل کے جنگلوں اور راجپوتانہ کے ریگستانوں نے غیر آریوں کی نسلوں کو اپنے آغوش میں چھپائے رکھا اور ہندوﺅں کی شودر قوموں کی صورت میں وہ آج بھی ہندوستان کی آبادی کا ایک قابل تذکرہ حصہ سمجھے جاتے ہیں۔

ہندوستان کے آریہ بھی ایرانی وخراسانی لوگ تھے، عباسیوں کے خراسانی سپہ سالار بھی بنوامیہ کے قتل و غارت میں عباسیوں کو ایسے مظالم اور ایسے تشدد پر آمادہ کر سکے کہ ہندوستان کے غیر آریوں کی مظلومی کے افسانے درست نظر آنے لگے۔

دنیا کی خفیہ انجمنوں کے حالات پڑھنے سے معلوم ہوتا ہے کہ ان خفیہ سازشوں کو کامیاب بنانے والے حد سے زیادہ قتل وخونریزی اور مظالم و بے رحمی کا ارتکاب کر سکتے ہیں۔

خاندان بنو امیہ سے خلافت اسلامیہ کو نکالنا کوئی جرم نہ تھا، لیکن خاندان بنو امیہ سے خلافت اسلامیہ کو نکال کر ایک دوسرے خاندان کو اسی طرح خلافت اسلامیہ کے سپرد کردینا ہرگز کوئی خوبی کی بات نہ تھی، اسلام اور عالم اسلام کو اس سے کوئی فائدہ نہیں پہنچ سکتا تھا، لہٰذا بنوعباس کو نہایت ہی قابل شرم خونریزی اور قتل وغارت کا ارتکاب کرنا پڑا۔

ابومسلم اور قحطبہ بن شبیب اور دوسرے نقباء اہل بیت نے خراسان کے شہروں میں جس قدر قتل عام کا بازار گرم کیا، اس کا کچھ تھوڑا تھوڑا تذکرہ اوپر کے صفحات میں آچکا ہے۔ امام ابراہیم نے خود ابومسلم کو اپنے آخری خط میں تاکیدی طور پر لکھا تھا کہ خراسان میں کسی عربی بولنے والے کو زندہ نہ رکھنا، اس سے بھی ان کا مدعا یہی تھا کہ بنو امیہ کے طرفدار لوگ خراسان میں وہی عربی قبائل تھے جو فاتحانہ خراسان میں سکونت پزیر تھے، جبکہ باشندگان خراسان کو جو نو مسلم تھے وہ سب کے سب دعوت عباسیہ کے معمول بن سکتے تھے۔

لہٰذا ابو مسلم نے اموی اثر ورسوخ اور باقیات کو ختم کرنے کے لیے عرب لوگ قتل کرائے اور نتیجہ یہ ہوا کہ ملک خراسان میں جو کثیرالتعداد عربی قبائل پہنچ کر اس ملک کی زبان، معاشرت، تمدن کو عربی بنانے میں کامیابی حاصل کر رہے تھے، سب کے سب قتل ہو گئے اور عربی عنصر جو تمام ملک کو اپنا ہم رنگ بنا رہا تھا، یک لخت مغلوب و بے اثر و ناپید ہو گیا، جس کی وجہ سے ایرانی زبان و تمدن، ایرانی معاشرت، ایرانی اخلاق مرتے مرتے پھر زندہ ہو گئے اور ایران و خراسان جو مصر کی طرح سے آج عربی ملک ہوتے، پھر فارسی ملک بن گئے۔

ابو مسلم خود خراسانی اور ایرانی النسل تھا، اس کو عربوں کے قتل سے زیادہ دوسرا دلچسپ کام نہیں ہو سکتا تھا، قومی تعصب جس کو اسلام نے بالکل مٹا دیا تھا، عہد بنوامیہ میں پھر عود کر آیا تھا اور اسی قومی عصبیت اور قبائلی افتراق کے واپس آجانے کا نتیجہ تھا کہ بنو امیہ نے جس طرح تمام عربی قبائل بالخصوص بنو ہاشم کو مجبور بنا دیا تھا، اس لیے وہ ہر ایک شخص کو جس کی نسبت انہیں معلوم ہو جاتا تھا کہ یہ قبیلہ بنوامیہ سے تعلق رکھتا ہے، نہایت خوف اور دہشت کی نگاہ سے دیکھتے تھے اور اب انہوں نے قابو پاتے ہی اپنی تمام قوت اس خوف و خطر سے محفوظ رہنے کے لیے صرف کر دی اور مصمم ارادہ کر لیا کہ اس قبیلہ کو صفحۂ ہستی سے نیست و نابود کر دیا جائے۔ 258 views 16:45

تاریخ اسلام(اردو) عبداللہ سفاح کا چچا عبداللہ بن علی جب ۵ رمضان ۱۳۲ھ کو دمشق میں داخل ہوا ہے تو اس نے قتل عام کا حکم دیا، جب آخری اموی خلیفہ مروان بن محمد بوصیر میں قتل ہو چکا تو عباسیوں کے لیے سب سے ضروری کام بنوامیہ کا استیصال تھا، لیکن خلافت بنوامیہ کے قصر رفیع کو منہدم کرنے کے کام میں بعض بنوامیہ بھی عباسیوں کے شریک ہو گئے تھے اور فاتح عباسیوں کے ساتھ عزت و تکریم کے ساتھ رہتے تھے، اسی طرح بنو امیہ کی نسل کا تخم سوخت ہونا ممکن نہ تھا، لیکن ابومسلم اس کام پر کمر ہمت چست باندھ چکا تھا، اس نے عبداللہ سفاح اور عباسی سرداروں کو بار بار لکھا کہ بنو امیہ کے کسی فرد کو چاہے وہ کیسا ہی ہو، ہمدرد اور بہی خواہ کیوں نہ ہو، ہرگز زندہ نہ چھوڑا جائے، لیکن اس مشورے پر عمل نہ ہوا، کیونکہ بعض ایسے افراد تھے جنہوں نے بڑی بڑی جمعیت کے ساتھ عین نازک و خطرناک موقعوں پر عباسیوں کی شرکت اور اموی خلیفہ کی بغاوت اختیار کر کے نہایت اہم امداد پہنچائی تھی، ان کو قتل کرنے سے انسانی شرافت مانع تھی۔

ابو مسلم نے یہ اہتمام کیا کہ شاعروں اور مصاحبوں کو جو عباسی خلیفہ اور عباسی سپہ سالاروں کے دربار میں آمدورفت رکھتے تھے، رشوتیں بھیج بھیج کر اور اپنی طرف سے لوگوں کو یہ تعلیم دے کر روانہ کیا کہ دربار میں جاکر ایسے اشعار پڑھیں اور ایسی باتیں کریں، جس سے بنوامیہ کی نسبت عباسیوں کا غصہ بھڑکے اور ان کی طبیعت میں انتقام اور قتل کے لیے اشتعال پیدا ہو، چنانچہ اس کوشش کا نتیجہ یہ ہوا کہ عباسیوں نے چن چن کر ہر ایک بنو امیہ کو قتل کر دیا، سفاح نے سلیمان بن ہشام بن عبدالملک کو سر دربار ایک ایسے ہی شاعر کے اشتعال انگیز اشعار سن کر بلا توقف قتل کرا دیا، حالانکہ سلیمان بن ہشام عبداللہ سفاح کی مصاحبت میں موجود اور اس کا بڑا ہمدرد تھا۔

عبداللہ بن علی جن دنوں فلسطین کی طرف تھا، وہاں نہر ابی فطرس کے کنارے دستر خوان پر بیٹھا کھانا کھا رہا تھا اور اسی(۸۰) نوے (۹۰) بنو امیہ اس کے ساتھ کھانے میں شریک تھے، اسی اثناء میں شبل بن عبداللہ آگیا، اس نے فوراً اپنے اشعار پڑھنے شروع کئے جن میں بنو امیہ کی مذمت اور امام ابراہیم کے قید ہونے کا ذکر کر کے بنوامیہ کے قتل کی ترغیب دی گئی تھی، عبداللہ بن علی (عبداللہ سفاح کے چچا) نے اسی وقت حکم دیا کہ ان سب کو قتل کر دو، اس کے خادموں نے فوراً قتل کرنا شروع کیا، ان میں بہت سے ایسے تھے جو بالکل مر گئے تھے، بعض ایسے بھی تھے کہ وہ زخمی ہو کر گر پڑے تھے، مگر ابھی ان میں دم باقی تھا، عبداللہ بن علی نے ان سب مقتولوں اور زخمیوں کی لاشوں کو برابر لٹا کر ان کے اوپر دستر خوان بچھوایا، اس دستر خوان پر کھانا چنا گیا اور عبداللہ بن علی مع ہمراہیوں کے پھر اس دستر خوان پر بیٹھ کر کھانا کھانے میں مصروف ہوا، یہ لوگ کھانا کھا رہے تھے اور ان کے نیچے وہ زخمی جو ابھی مرے نہیں تھے کراہ رہے تھے، حتیٰ کہ یہ کھانا کھا چکے اور وہ سب کے سب مر گئے۔

ان مقتولوں میں محمد بن عبدالملک، معز بن یزید، عبدالواحد بن سلیمان، سعید بن عبدالملک، ابوعبیدہ بن ولید بن عبدالملک بھی تھے، بعض کا بیان ہے کہ ابراہیم معزول خلیفہ بھی ان ہی میں شامل تھا۔

اس کے بعد عبداللہ بن علی بن عباس نے خلفائے بنوامیہ کی قبروں کو آکر کھدوایا، عبدالملک کی قبر سے اس کی کھوپڑی برآمد ہوئی، امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کی قبر میں سے کچھ نہ نکلا، بعض قبروں سے بعض اعضاء برآمد ہوئے، باقی سب مٹی بن چکے تھے، ہشام بن عبدالملک کی قبر کھودی گئی تو صرف ناک کی اونچائی جاتی رہی تھی، باقی تمام لاش صحیح سالم نکلی۔

(حدیث رسول صلی اللہ علیہ و سلم کے مطابق اللہ تعالیٰ نے زمین پر حرام کر رکھا ہے کہ وہ انبیاء کے جسموں کو کھائے۔ (ابوداود‘ کتاب الوتر‘ حدیث ۱۵۳۱۔ نسائی‘ کتاب الجمعہ، حدیث ۱۳۷۷۔ ابن ماجہ‘ کتاب اقامۃ الصلوٰۃ والسنۃ فیھا‘ حدیث ۱۰۸۴‘ حدیث صحیح الالبانی رحمہ اللہ تعالی )

عبداللہ بن علی نے اس لاش کو کوڑے لگوائے، پھر اس کو صلیب پر چڑھایا، پھر جلا کر اس کی راکھ ہوا میں اڑا دی۔ عبداللہ بن علی کے بھائی سلیمان بن علی بن عبداللہ بن عباس نے بصرہ میں بنوامیہ کے ایک گروہ کو قتل کر کے لاشوں کو راستے میں پھینکوا دیا اور دفن کرنے کی ممانعت کر دی، ان لاشوں کو مدتوں کتے کھاتے رہے، عبداللہ بن علی کے دوسرے بھائی یعنی سفاح کے چچا داؤد بن علی نے مکہ و مدینہ اور حجاز و یمن میں چن چن کر ایک ایک اموی کو قتل کرا دیا اور بنو امیہ میں سے کسی کا نام و نشان باقی نہ رکھا۔ 252 views 16:46

تاریخ اسلام(اردو) غرض تمام ممالک محروسہ میں حکم عام جاری کر دیا گیا کہ جہاں کوئی بنو امیہ نظر آئے اس کو بلا دریغ قتل کر دیا جائے، ولایتوں کے والی اور شہروں کے حاکم جو عموماً عباسی تھے، اپنی اپنی جگہ اسی تجسس میں مصروف رہنے لگے کہ کہیں کسی بنوامیہ کا پتہ چلے اور اس کو قتل کیا جائے، یہاں تک کہ جس طرح کسی درندے کا شکار کرنے کے لیے لوگ گھر سے نکلتے ہیں، اسی طرح بنوامیہ کا شکار کرنے کے لیے روزانہ لوگ گھروں سے نکلتے تھے، بنوامیہ کے لیے کوئی مکان، کوئی گاؤں، کوئی قصبہ، کوئی شہر جائے امن نہ رہا اور برسوں ان کوتلاش کر کے عباسی لوگ قتل کرتے رہے۔

(گویا عصبیت کی انتہا ہو گئی تھی کہ بنو امیہ کو درندوں کی طرح شکار کیا جاتا تھا۔ یہ عباسیوں کی جاہلانہ سوچ تھی۔ جبکہ حدیث نبوی صلی اللہ علیہ و سلم میں عصبیت کی طرف بلانے والے کی اسی حالت میں موت کو جاہلیت کی موت کہا گیا ہے۔)

خراسان میں ابومسلم نے یہ کام اور بھی زیادہ اہتمام و ہمت کے ساتھ انجام دیا تھا، اس نے نہ صرف بنوامیہ بلکہ ان لوگوں کو بھی جنہوں نے کبھی نہ کبھی بنوامیہ کی حمایت یا کوئی خدمت انجام دی تھی قتل کرا دیا، اس قتل عام میں بچ بچ کر جو لوگ ایک جگہ سے دوسری جگہ بھاگ کر جا سکے، انہوں نے اپنے بھیس بدل بدل کر نام اور قوم دوسری بتا بتا کر ہر جگہ سرحدوں کی طرف رخ کیا۔

خراسان کے صوبوں اور ولایتوں میں چونکہ یہ قتل عام بہت زیادہ سخت وشدید تھا، یہاں جو بنوامیہ اور ان کے ہمدرد قبائل تھے وہ سندھ، کوہ سلیمان اور کشمیر کی طرف بھاگ کر پناہ گزین ہوئے، جن لوگوں نے اپنے قبیلوں کے نام بدل دیئے تھے، وہ بھی رفتہ رفتہ اسلامی حدود سے باہر نکل آئے، کیونکہ ان کو سلطنت عباسیہ کی حدود میں اطمینان حاصل نہیں ہو سکتا تھا۔

یہ مفرور عربی قبائل جو سندھ و کشمیر و پنجاب وغیرہ کی طرف بھاگ کر آئے تھے، کہا جاتا ہے کہ ان کی نسلیں آج تک ہندوستان میں موجود ہیں اور اپنے بدلے ہوئے ناموں اور پیشوں کی وجہ سے اپنے عربی نژاد ہونے کو بھول گئی ہیں۔

بنو امیہ کا ایک شخص عبدالرحمن بن معاویہ بن ہشام شکار ہوتے ہوتے بال بال بچ گیا اور فرار ہو کر مصر و قیروان ہوتا ہوا اندلس میں پہنچ گیا، اندلسی چونکہ دعوت عباسیہ کے اثر سے نسبتاً پاک تھا اور وہاں بنوامیہ کے ہواہ خواہ بکثرت موجود تھے، لہٰذا اندلس پہنچتے ہی اس ملک پر قابض ہو گیا اور ایک ایسی سلطنت و خلافت قائم کرنے میں کامیاب ہوا، جس کو عباسی خلفاء ہمیشہ رشک کی نگاہوں سے دیکھتے رہے اور اس اموی سلطنت کا کچھ نہ بگاڑ سکے۔